mohsin naqvi poetry

Mohsin Naqvi Poetry: Best Sad Mohsin naqvi poetry In Urdu Text (محسن نقوی شاعری)

Spread the love

Mohsin Naqvi Poetry In Urdu,

Mohsin Naqvi, born on May 5, 1947 in Dera Ghazi Khan, Punjab, Pakistan and leaving the world on November 9 1996, was a revered Urdu poet who hailed from a respected Syed tribe. Mohsin Naqvi Poetry captivating Sad poetry especially his sad and romantic verses resonated deeply with the youth earning him a place among the most celebrated Urdu poets. This collection of Mohsin Naqvi Poetry renowned sad and romantic poetry is sure to enthrall readers.

Mohsin Naqvi, the maestro of Urdu poetry, crafted verses that resonate to this day.Mohsin Naqvi poetry delved into the raw emotions of love, pain, and spirituality, painting vivid pictures of the human experience.

Through his profound Mohsin Naqvi poetry,he used metaphors and heartfelt language to capture life’s complexities. His verses continue to echo the timeless essence of Mohsin Naqvi poetry providing the enduring power of words to connect us all.

Also Read The Best Post Of 2023.

Best Mohsin Naqvi Poetry In Urdu Text

Add a heading 8 1
mohsin naqvi poetry

ہر وقت کا ہنسنا تجھے برباد نہ کر دے
تنہائی کے لمحوں میں کبھی رو بھی لیا کر

Her waqt ka hasna tujay berbad na ker day
Tanhai k lamhu may kabi ro b lia karo

Mohsin Naqvi Poetry In Urdu

mohsin naqvi poetry in urdu
mohsin naqvi poetry in urdu

صرف ہاتھوں کو نہ دیکھو کبھی آنکھیں بھی پڑھو
کچھ سوالی بڑے خوددار ہوا کرتے ہیں

Sirf hathu ko na dekho kabi ankhay b paro
Kuch sawali baray khuddaar hua kertay hay

mohsin naqvi poetry
mohsin naqvi poetry

کون سی بات ہے تم میں ایسی
اتنے اچھے کیوں لگتے ہو

Kon si bat hay tum may aise
Itnay achay kyu lagtay ho

Emotional Mohsin Naqvi Poetry In 2 Lines

mohsin naqvi poetry in urdu
mohsin naqvi poetry in urdu

تمہیں جب روبرو دیکھا کریں گے
یہ سوچا ہے بہت سوچا کریں گے

Tumay jab roobaroo dekha karay gay
Ye socha hay bohat socha karay gay

Mohsin Naqvi Poetry In Urdu 2 Lines

کی کون سی منزل پہ اس نے چھوڑا تھا کہ وہ تو یاد ہمیں بھول کر بھی آتا ہے 1
mohsin naqvi poetry

وفا کی کون سی منزل پہ اس نے چھوڑا تھا
کہ وہ تو یاد ہمیں بھول کر بھی آتا ہے

Wafa ki kon si manzil pay us nay chora tha
K wo to yad hamay bhool ker b aata hay

یوں دیکھتے رہنا اسے اچھا نہیں محسنؔ
وہ کانچ کا پیکر ہے تو پتھر تری آنکھیں

Yu daikhtay rehna usay acha nahi lagta mohsin
Wo kanch ka paiker hay to pather mere ankhay

Mohsin Naqvi Poetry In Urdu Text

کل تھکے ہارے پرندوں نے نصیحت کی مجھے
شام ڈھل جائے تو محسنؔ تم بھی گھر جایا کرو

Kal thakay haray parindu nay nasihat ki mujay
Shaam dal jaye to mohsin tum b ger jaya karo

ہجوم شہر سے ہٹ کر، حدود شہر کے بعد
وہ مسکرا کے ملے بھی تو کون دیکھتا ہے ؟

Hajoom e sher say hat ker hadood e sheher k bad
Wo muskara k b milay to kon dekhta hay

کتنے لہجوں کے غلافوں میں چھپاؤں تجھ کو
شہر والے مرا موضوع سخن جانتے ہیں

Kitnay lehju k ghelafu may chupayu tuj ko
Sher walay mera mozu sukhan jantay hay

People May Also Like…………..best Joun Elia Poetry In Urdu

دکھ ہی ایسا تھا کہ محسنؔ ہوا گم سم ورنہ
غم چھپا کر اسے ہنستے ہوئے اکثر دیکھا

Dukh hi aisa tha k mohsin hua gum sum werna
Ghum chupa ker usay hanstay hue akser dekha

شمار اس کی سخاوت کا کیا کریں کہ وہ شخص
چراغ بانٹتا پھرتا ہے چھین کر آنکھیں

Shumar us ki skhawat ka kiya karain kay wo shakhs
Charagh bant ta phirta ha cheen kar aankhain

میرے ہاتھوں کی لکیروں میں یہ عیب ہے محسن
میں جس شخص کو چھو لوں وہ میرا نہیں رہتا

Mere hathon ki lakeeron main ye aaib ha mohsin
Main jis shakhs ko chho loon wo mera nahi rehta

تجھے اداس بھی کرنا تھا خود بھی رونا تھا
یہ حادثہ بھی میری جان ، کبھی تو ہونا تھا

Tujhay udas b karna tha khud b rona tha
Yeh hadsa b meri jan kabi to hona tha

کیوں تیرے درد کو دیں تہمت و یرانی ِدل
زلزلوں میں تو بھرے شہر اُجڑ جاتے ہیں

Kiyun teray dard ko dain tuhmat o verani e dil
Zalzalon main tu bharay shehar ujarr jatay han

mohsin naqvi poetry in urdu 2 lines text

انھیں جو ناز ہے خود پر نہیں بے وجہ محسن
کہ جس کو ہم نے چاہا ہو، وہ خود کو عام کیوں سمجھے

Inhain jo naz hay khud par nahi bay waja mohsin
Kay jis ko ham nay chaha ho wo khud ko aam kiyun samjhay

اب ایک پل کا تغافل بھی سہہ نہیں سکتے
ہم اہل دل ، کبھی عادی تھے انتظار کے بھی

Ab aik pal ka tughafil bhi sah nahi saktay
Ham ahal e dil kabhi aadi thy intazar kay b

کچھ حادثوں سے گر گئے محسن زمین پر
ہم رشک آسمان تھے ابھی کل کی بات ہے

Kuch hadson say gir gaye mohsin zameen par
Ham rashk e asman thay abhi kal ki baat hay

جس کی قسمت میں لکھا ہو رونا محسن
وہ مسکرا بھی دیں تو آنسو نکل آتے ہیں

Jis ki qismat main likha ho rona mohsin
Wo muskara B dain tu anso nikal aatay han

پہلے خوشبو کے مزاجوں کو سمجھ لو محسن
پھر گلستان میں کسی گل سے محبت کرنا

Pehlay khushboo kay mazajon ko samajh lo mohsin
Phir gulastan main kisi gul say muhabat karna

اسکے سب جھوٹ بھی سچ ہیں محسن
شرط اتنی ہے وہ بولے تو سہی

Uskay sab jhot b sach haan mohsin
Shart itni hay wo bolay to sahi

Mohsin Naqvi Poetry In Urdu

ذکرشبِ فراق سے وحشت اسے بھی تھی
میری طرح کسی سے محبت اسے بھی تھی

Zikar e shab e faraq say wehshat issay b thi
Meri tarha kisi say muhabbat usay b thi

آنکھوں میں کوئی خواب اترنے نہیں دیتا
یہ دل کہ مجھے چین سے مرنے نہیں دیتا

Aankhon main koi khwab utarnay nahi deta
Yeh dil kay mujhay chain say marnay nahi deta

اُسی کی باتوں سے ہی طبیعت سنبھل سکے گی
کہیں سے محسن کو ڈھونڈ لاو اداس لوگو

Us ki batton say hi tabiyat sanbhal sakay gi
Kahin say mohsin ko dhond lao udas logo

ریشم زُلفوں ، نیلم آنکھوں والے اچھے لگتے ہیں
میں شاعر ہوں مُجھ کو اُجلے چہرے اچھے لگتے ہیں

Resham zulfon neelam aankhon waly achay lagtahy han
Main shair hoon mujh ko ujlay chahray achay lagtay haan

بچھڑ کےمُجھ سے کبھی تو نے یہ بھی سوچا ہے
ادھورا چاند بھی کِتنا اُداس لگتا ہے

Bichar kay mujh say kabhi tu nay yeh bhi socha hay
Adhora chand bhi kitna udas lagta hay

Mohsin Naqvi Poetry 2 Lines

قریب آشبِ تنہائ تجھ سے پیار کریں
تمام دِن کی تھکن کا علاج تُو ہی سہی

Kareeb a shabe tanhai tujh say piyar karain
Tamam din ki thakan ka ilaj tu hi sahi

ہمیں اب کھو کہ کہتا ہے مُجھے تُم یادآتے ہو
کِسی کا ہو کہ کہتا ہے مُجھے تُم یادآتے ہو

Hamain abb kho kay kehta hay mujhy tum yaad aatay ho
Kisi ka ho kay kehta hay mujhay tum yaad atay ho

اَب اس کو کھو رہا ہوں بڑے اشتیاق سے
وہ جس کو ڈھونڈنے میں زمانہ لگا مجھے

Ab us ko kho raha hoon baray ishtiaq say
Wo jis ko dhondnay main zamana laga mujhay

اتنا آساں نہیں شہرِمحبت کا پتہ محسن
خود بھٹکتے ہیں یہاں راہ بتانے والے

Itna asan nahi shehar e muhabbat ka pata mohsin
Khud bhataktay han yahan rah batanay waly

اسےپانا اسے کھونا اسی کے ہجر میں رونا
یہی گر عشق ہے محسن تو ہم تنہا ہی اچھے

Isy pana isy khona isi ky hijar main rona
Yahi gar ishq hai mohsin tu hum tanha hi achy

Sad Mohsin Naqvi Poetry In Urdu

کچھ بتاتا ہی نہیں غم کا سبب
بس یونہی گم سم ہے محسن آجکل

Kuch btana hi nahi ghum ka sabab
Bas yonhi gum sum hai mohsin aajkal

ہم دونوں کا دکھ تھا ایک جیسا
احساس مگر جدا جدا تھا

Hum doono ka dukh tha ek jesa
Ahsas megar juda juda tha

اِس شب کے مقدر میں سحر ہی نہیں محسن
دیکھا ہے کئی بار چراغوں کو بجھا کر

Iss shub ky mukadder main sehr hi nahi mohsin
Dekha ha kai bar charagoon ko buja k

وہ آج بھی صدیوں کی مسافت پہ کھڑا ہے
ڈھونڈا تھا جسے وقت کی دیوار گِرا کر

Wo aaj bhi saduon ki mosaft py kharra hai
Dondha tha jisy wqat ki devar gira kr

مہینوں بعد ملنے کی خوشی اپنی جگہ محسنؔ
وہ ظالم جب بچھڑتا ہے تو حالت اور ہوتی ہے

Mahinon baad milnay ki khushi apni jaga mohsin
Wo zalim jab bicharta ha tu halat aur hoti ha

چل پڑا ہوں میں زمانے کے اصولوں پہ محسن
میں اب اپنی ہی باتوں سے مُکر جاتا ہوں

Chal para hoon main zamany kay asolon pay mohsin
Main ab apni hi baton say mukar jata hoon

کس لیے محسن کسی بے مہر کو اپنا کہوں
دل کے شیشے کو کسی پتھر سے کیوں ٹکراوں میں

Kis liye mohsin kisi bay mehr ko apna kahon
Dil k sheshay ko kisi pathar say kyu takraon main

آوارہ و بدنام ہے مُحسن تو ہمیں کِیا
خُود ٹھوکریں کھا کھا کے سنبھل جائے گا آخر

Aawara-o-badnam hay mohsin tu hamain kiya
Khud thokarain kha kha kay sanbhal jaye ga aakhir

ہم نے غزلوں میں تُمھیں پُکارا ایسے
جیسے تُم ہو کوئی قسمت کا ستارہ مُحسن

Ham nay ghazalon main tumhain pukara aisay
Jaisy tum ho koi qismat ka sitara mohsin

محسن وہ ساتھ لے گئے ہر منظرِ حیات
ٹوٹا ہُوا سادِل پسِ منظر پڑا ہے

Mohsin wo sath lay gaye har manzar e hayat
Toota hua sa dil pas e manzar parra hai

میں اُس شخص کو کیسے مناو ں گا محسنؔ
جو مجھ سے روٹھا ہے میری محبت کے سبب

Main uss shakhs ko kaisay manaon ga muhsin
Jo mujh say rotha hai meri muhabbat kay sabab

اصولِ مُحبت میں تُم خود بے وفا ہو مُحسنؔ
وہ جو بچھڑا تو تُم مَر کیوں نہیں گئے

Usool e muhabbat main tum khud bewafa ho mohsin
Wo jo bichrra to tum mar kiyun nahi gaye

جن کے آنگن میں غریبی کا شجر ہو مُحسنؔ
اُن کی ہر بات زمانے کو بُری لگتی ہے

Jis kay aangan main ghareebi ka shajar ho mohsan
Un ki har baat zamanay ko buri lagti hai

Best Deep Sad Mohsin Naqvi Poetry In Urdu

بھڑکائیں میری پیاس کو اکثر تیری آنکھیں
صحرا میرا چہرہ ہے سمندر تیری آنکھیں

Bharrkain meri piyas ko aksar teri aankhain
Sehra mera chehra hai samundar teri aankhain

وہ میرے ضبط کا اندازہ کرنے آیا تھا
میں ہنس کے زخم نہ کھاتا تو اور کیا کرتا

Wo meray zabt ka andaza karnay aya tha
Main hans kay zakhm na khata tu aur kiya karta

کوئی تعویز دو ردِّ بَلّا کا
میرے پیچھے مُحبّت پڑ گئی ہے

Koi taveez du radd e balla ka
Meray peechay muhabbat parr gai hai

اِتنا خائف ہوں میں اِس دور کے ہنگاموں سے
اَب ہوا سانس بھی لیتی ہے تو ڈر جاتا ہوں

Itna khaif hoon main iss daur kay hangamon say
Ab hawa sans bhi leti hai tu darr jata hoon

ہر گھڑی رإیگاں گٌزرتی ہے
زندگی اب کہاں گٌزرتی ہے

Har gharri raigan guzarti hai
Zindagi abb kahan guzarti hai

اس کے میرے فاصلے مٌحسن نہ پوچھ
رنگ سے خوشبو جٌدا ہے اور بس

Us kay mery fasilay muhsan na puch
Rang say khushboo juda hai aur bas

شکل اسکی تھی دلبروں جیسی
خو تھی لیکن ستم گروں جیسی

Shakal uski thi dilbaron jesi
Khu thi lekin sitam garon jesi

ہر موڑ پہ مل جاتے ہیں ہمدرد ہزاروں
محسن تیری بستی میں اداکار بہت ہیں

Har mor per mil jatay hay hamdard
Mohsin teri basti mein adakar bohat hain

عمر اتنی تو عطا کر میرے فن کو خالق
میرا دشمن میرے مرنے کی خبر کو ترسے

Umer itni toh atta kar mere fun ko khaliq
Mera Dushman mere marne ki khabar ko tarse

بچھڑا، تو دوستی کے اثاثے بھی بٹ گئے
شہرت وہ لے گیا مجھے رسوائی دے گیا

Bichara, toh dosti k asase b bat gaye
Shohrat woh le gaya mujhay ruswai de gaya

وہ ماہتاب صفت آئینہ جبیں محسن
گلے ملا بھی تو مطلب نکالنے کے لئے

Woh mahtab sift aaina jabain mohsin
Galay mila b toh matlab nikalnay ke liye

پلٹ کر بھی نہیں دیکھیں گئے اس کی بے رخی محسن
بھلا دیں گئے اس سے ایسے کہ وہ بھی یاد رکھے گا

Plat kar b nahi dekhain gaye uski berukhi mohsin
Bhula day gay usay aisay keh woh b yaad rakhay ga

مجھے سے مت پوچھ کہ احساس کی حد کیا تھی
دھوپ ایسی تھی کہ سایے کو بھی جلتے دیکھا

Muj say mat pochh keh ehsaas ki had kya thi
Dhoop aisi thi keh saaye ko b jalte dekha

شدتِ غم میں میرے دیدہِ تر نے محسن
پتھروں کو بھی کئی بار پگھلتا دیکھا

Shiddat e ghum may meray deeda e ter nay mohsin
Patheru ko b kae baar pigalta dekha

Final Words.

Mohsin Naqvi, an influential figure in Urdu poetry, passed away in 1996, but his impact on literature lives on through his profound legacy of Mohsin Naqvi poetry.

His exploration of human emotions and experiences, particularly in his Mohsin Naqvi sad poetry, remains deeply respected. Naqvi’s verses delved into themes of love, pain, and spirituality, leaving a lasting impression on readers. Even after his passing, his words continue to inspire and stand as a testament to the enduring power of poetic expression in Urdu literature, especially in the realm of Mohsin Naqvi poetry.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *