amjad islam amjad poetry

Amjad Islam Amjad Poetry: Best amjad islam amjad poetry In urdu 2 lines – Poeticexplorers

Spread the love

Amjad Islam Amjad Poetry In Urdu,

Amjad Islam Amjad is a famous poet from Pakistan, born on August 4, 1944, in Lahore. His poetry is well-loved for its deep feelings and understanding of life. Amjad writes about love, emotions, and everyday life, connecting with people from different backgrounds. Besides poetry, he’s also known for his work in TV and film as a writer. His words, a mix of old and new, tell stories that everyone can relate to. Amjad’s simple yet powerful verses make his poetry timeless and easy for anyone to enjoy. Read the best and famous collection of amjad islam amjad poetry.

People May Also Like……….Best Mirza Ghalib Poetry In Urdu

Best Amjad Islam Amjad Poetry In Urdu

amjad islam amjad poetry
amjad islam amjad poetry

اُس نے آہستہ سے جب پُکارا مجھے
جُھک کے تکنے لگا ہر ستارا مجھے

Aus ne ahista se jab pukara mujhy
jhuk ke takne laga har sitara mujhy

amjad islam amjad poetry
amjad islam amjad poetry

بھیڑ میں اک اجنبی کا سامنا اچھا لگا

سب سے چھپ کر وہ کسی کا دیکھنا اچھا لگا

Bheer may aik ajnabi ka samna acha laga
Sab say chup ker wo kisi ka dekhna acha laga

Amjad Islam Amjad Poetry

amjad islam amjad poetry in urdu
amjad islam amjad poetry in urdu

دشت بے آب کی طرح گزری
زندگی خواب کی طرح گزری

Dasht bay aab ki tarah guzre
Zindgi khawab ki tara guzre

Add a heading 4 1 1
amjad islam amjad poetry 2 lines

Also Read The Post…….Best Friend Poetry In Urdu 2 Lines Text

جہاں ہو پیار غلط فہمیاں بھی ہوتی ہیں

سو بات بات پہ یوں دل برا نہیں کرتے

Jaha ho payar ghalfaimiye b hoti hay
So bat bat pay yu dil bura nahe kartay

Amjad Islam Amjad Poetry In Urdu 2 Lines

amjad islam amjad poetry in urdu
amjad islam amjad poetry in urdu

آنکھوں کا رنگ بات کا لہجہ بدل گیا
وہ شخص اک شام میں کتنا بدل گیا

Ankhon Ka Rang Baat Ka Lehjha Badal Gaya
Wo Shakhs Ek Shaam Mie Kitna Badal Gaya

amjad islam amjad poetry
amjad islam amjad poetry

اِک نظر دیکھا تھا اس نے آگے یاد نہیں

کُھل جاتی ہے دریا کی اُوقات سمندر میں

Ek nazar dekha tha us ne aage yaad nahin
Khul jaatee hai dariya kee auqaat samundar mein

amjad islam amjad poetry
amjad islam amjad poetry

اِک نظر دیکھا تھا اس نے آگے یاد نہیں

کُھل جاتی ہے دریا کی اُوقات سمندر میں

Ek nazar dekha tha us ne aage yaad nahin
Khul jaatee hai dariya kee auqaat samundar mein

Amjad Islam Amjad Poetry In Urdu

amjad islam amjad poetry in urdu
amjad islam amjad poetry in urdu

اُس کے لہجے میں برف تھی لیکن

چُھو کے دیکھا تو ہاتھ جلنے لگے

Us ke lahaje mein barph thee lekin
Choo ke dekha to haath jalane lage

amjad islam amjad poetry
amjad islam amjad poetry

Amjad Islam Amjad Poetry In Urdu 2 Lines Text

جس طرف تو ہے ادھر ہوں گی سبھی کی نظریں

عید کے چاند کا دیدار بہانہ ہی سہی

Jis taraf tu hay udar hu ge sabi ki nazray
Eid k chand ka deedaar bahana hi sahi

بڑے سکون سے ڈوبے تھے ڈوبنے والے

جو ساحلوں پہ کھڑے تھے بہت پکارے بھی

Baray sakoon say doobay thay doobnay walay
Jo sahilu pay kharay thay bohat pukaray b

دشت دل میں سراب تازہ ہیں
بجھ چکی آنکھ خواب تازہ ہیں

Dasht e dil may sarab taza hay
Buj chuki ankh khawab taza hay

کہاں آ کے رکنے تھے راستے کہاں موڑ تھا اسے بھول جا

وہ جو مل گیا اسے یاد رکھ جو نہیں ملا اسے بھول جا

Kaha aa k ruknay thay rastay kaha morr tha usay bool ja
Wo jo mil gaya usay yad rakh jo nahe mila usay bool ja

آنکھوں میں کیسے تن گٸ دیوارِ بے حِسی

سینوں میں گُھٹ کے رہ گئی آواز کس طرح

Aankhon mein kaise tan gaee deevaar e be hisee
Seenu mein ghut ke rah gaee aavaaz kis tarah

اِک نظر دیکھا تھا اس نے آگے یاد نہیں

کُھل جاتی ہے دریا کی اُوقات سمندر میں

Ek nazar dekha tha us ne aage yaad nahin
Khul jaatee hai dariya kee auqaat samundar mein

مانا نظر کے سامنے ہے بے شمار دُھند

ہے دیکھنا کہ دُھند کے اس پار کون ہے

Mana nazar ke samne hai be-shumar dhund
Hai dekhna keh dhund ke is paar kaun hai

People May Also Like……Best Friendship Status Quotes.

بے وفا تو وہ خیر تھا امجد

لیکن اس میں کہیں وفا بھی تھی

Bewafa to vo khair tha Amajad
Lekin us mein kaheen wafa bhee thee

بچھڑ کے تُجھ سے نہ جی پائے

مختصر یہ ہے اِس ایک بات سے نکلی ہے داستان کیا کیا

Bichhar ke tujh se na jee pay
Mukhtasar ye hai is ek baat se nikalee hai daastaan kya kya

سوال یہ ہے کہ آپس میں ہم ملیں کیسے

ہمیشہ ساتھ تو چلتے ہیں دو کِنارے بھی

Sawal ye hai keh aapas mein ham milen kaise
Hamesha saath to chalate hain do kinaare bhee

سائے لرزتے رہتے ہیں شہروں کی گلیوں میں

رہتے تھے انسان جہاں اب دہشت رہتی ہے

Saee larazate rahtay hain shaharon kee galiyon mein
Rehty the insaan jahaan ab dahashat rahatee hai

جیسے بارش سے دُھلے صحنِ گُلستان اَمجد

آنکھ جب خُشک ہوئی اور بھی چہرہ چمکا

Jeise baarish se dhule sehan e gulistaan amajad
Aankh jab khushk huee aur bhee chehara chamaka

شبنمی آنکھوں کے جُگنو کانپتے ہونٹوں کے پھول

اِک لمہ تھا جو امجد آج تک گُزرا نہیں

Shabanamee aankhon ke juganu kaampate honthon ke phool
Ek lamha tha jo amajad aaj tak guzara nahin

ہر بات جانتے ہوئے دل مانتا نہ تھا

ہم جانے اعتبار کے کس مرحلے میں تھے

Har baat maanate hue dil manta na tha
Ham jaane etibaar ke kis marahale mein the

حساب عمر کا اتنا سا گوشوارا ہے
تمہیں نکال کے دیکھا تو سب خسارا ہے

Hisab umer ka itna sa goshwara hai
Tumhein nikal k deikha to sub khasara hai

سائے ڈھلنے چراغ جلنے لگے

لوگ اپنے گھروں کو چلنے لگے

Saay daalane charaag jalane lage
Log apane gharon ko chalane lage

Amjad Islam Amjad Poetry In Urdu 2 lines

اُس نے آہستہ سے جب پُکارا مجھے

جُھک کے تکنے لگا ہر ستارا مجھے

Us ne ahista se jab pukara mujhe
Jhuk ke takne laga har sitara mujhe

وہ سامنے ہے پھر بھی دکھائی نہ دے سکے

میرے اور اُس کے بیچ دیوار کون ہے

Woh saamane hai phir bhee dikhaee na de sake
Mere aur us ke beech ye divaar kaun hai

پیڑ کو دیمک لگ جائے یا آدم ذاد کو غم

دونوں ہی کو امجد ہم نے بچتے دیکھا کم

ہنس پڑتا ہے بہت زیادہ غم میں بھی انسان

بہت خوشی سے بھی تو ہو جاتی ہیں آنکھیں نم

pairr ko deemak lag jaye ya aadam zad ko gham

dono hi ko amjad main nay bachtay dekha kam

Hans parrta hai buhat ziyada gham main bhi insan

Buhat khushi say bhi tu ho jati hain aankhain num

یہ جو حاصل ہمیں ہر شے کی فراوانی ہے

یہ بھی تو اپنی جگہ ایک پریشانی ہے

Yeh jo hasil hamay her shay ki farawani hay
Yeh b to apni jaga aik pereshani hay

چہرے پہ میرے زٌلف کو پھیلاو کِسی دِن

کیا روز گرجتے ہو برس جاٶ کِسی دن

Chehray pay mery zulf ko phalao kisi din

Kiya roz garjtay ho bars jao kisi din

Amjad Islam Amjad Poetry

ہر بات جانتے ہوئے دل مانتا نہ تھا
ہم جانے اعتبار کے کس مرحلے میں تھے

نہ کوٸ غم خزاں کا ہے، نہ کوٸ خواہش ہے بہاروں کی

ہمارے ساتھ ہے امجدؔ کِسی کی یاد کا موسم

Na koi gham khazan ka hai, na koi khwahish hai baharon ki

Hamary sath hai amjad kisi ki yaad ka mausam

جو ہم پر گٌزری ہے جاناں وہ تٌم پر بھی گٌزرے

جو دِل بھی چاہے تو ایسی دٌعا نہیں کرتے

Jo ham par guzri hai janan vo tum par bhi guzray

Jo dil b chahy tu aisi dua nahi kartay

یہ جو خواہشوں کا پرند ہے، اسےموسموں سے غرض نہیں

یہ اٌڑے گا اپنی ہی موج میں، اِسے آب دے کہ سراب دے

Ye jo khwahishon ka parind hai, isay mausamon say gharaz nahi

Yeh urray ga apni hi mauj main, issay aab day keh sarab daay

یہ اور بات ہے تٌجھ سے گِلہ نہیں کرتے

جو زخم تٌو نے دیۓ ہیں بھرا نہیں کرتے

Ye aur baat hai tujh say gila nahi kartay

Jo zakhm tu nay diye hain bharra nahi kartay

کہتے تھے ایک پل نہ جیئے گے تیرے بغیر
ہم دونوں رہ گۓ وہ وعدہ نہیں رہا

Kehty thy aik pall nah jiyen gy tery bagair
Hum dono reh gaye, wo waada nahe raha

ممکن نہیں ہے مجھ سے یہ طرز منافقت
دنیا تیرے مزاج کا بندہ نہیں ہوں میں

Mumkin nahin hai mujh sy ye tarz-e-munafiqat
Duniya tery mizaaj ka banda nahe hun main
میں دیکھتی ہوں، تو بس دیکھتی ہی رہتی ہوں

وہ آئینے میں بھی اپنے ہی رنگ چھوڑ گیا

Main dekhti hun tu bas dekhti hi rehti hoon

Wo aainay main bhi apnay hi rang choor giya

سوال یہ ہے کہ آپس میں ہم مِلیں کیسے

ہمیشہ ساتھ تو چلتے ہیں دو کنارے بھی

Swal ye hai keh aapas main ham milain kesy

Hamesha sath tu chaltay hain do kinary bhi

اگر کبھی میری یاد آئے

تو چاند راتوں کی نرم دِل گیر روشنی میں

کِسی سِتارے کو دیکھ لینا

Agar kabhi Meri Yaad aaye

Tu chand raton ki narm dilgir roshni main

Kisi sitary ko dekh lena

اپنی گلی میں اپنا ہی گھر ڈھونڈتے ہیں لوگ

امجدؔ یہ کون شہر کا نقشہ بدل گیا

Apni gali main apna hi ghar dhundty hain log

Amjad ye kon sheher ka naqsha badal giya

تیرے مقدر کی وہ بارشیں کسی اور چھت پر گریں۔
دل بے خبر، میری بات سنو، اسے بھول جاؤ، اسے بھول جاؤ

Wo tere naseeb ki barishen kisi aur cahhat pe baras gain
Dil-e-be-Khabar meri baat sun use bhul ja use bhul ja

ستارے اور ستارے رات سمندر میں اتر رہی ہے۔
جیسے سمندر میں ڈوبنے والوں کے ہاتھ

tara tara utar rahi hai raat samundar mein
jaise Dubne walon ke hon hath samundar mein

Amjad Islam Amjad Poetry In urdu

اب تک نہ کھل سکا کہ مرے روبرو ہے کون!
کس سے مکالمہ ہے ! پسِ گفتگو ہے کون!

سایہ اگر ہے وہ تو ہے اُس کا بدن کہاں؟
مرکز اگر ہوں میں تو مرے چار سو ہے کون!

کس کی نگاہِ لُطف نے موسم بدل دئیے
فصلِ خزاں کی راہ میں یہ مُشکبو ہے کون!

Conclusion

In conclusion, Amjad Islam Amjad poetry, including his renowned “Amjad Islam Amjad poetry,” has left an enduring and profound impression on the world of literature. Readers worldwide celebrate and cherish his verses, as “Amjad Islam Amjad poetry” possesses a unique ability to intricately capture the essence of human emotions, including love and longing, along with the intricate facets of life.

Amjad Islam Amjad’s extensive body of work, encompassing both his famous poetry and a broader collection, consistently and masterfully weaves vivid imagery and profound insights. His impact on Urdu literature is undeniable, making his poetry a timeless treasure that resonates across generations, solidifying his enduring legacy in the realm of “Amjad Islam Amjad poetry.”

FaQ

Q1: What is the Famous Poetry Of Amjad Islam Amjad?

Ans: Here is the best and famous amjad islam amjab poetry.

ﻭﮦ ﺟﻮ ﮔﯿﺖ ﺗﻢ ﻧﮯ ﺳﻨﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﯿﺮﯼ
ﻋﻤﺮ ﺑﮭﺮ ﮐﺎ ﺭﯾﺎﺽ ﺗﮭﺎ
ﻣﯿﺮﮮ ﺩﺭﺩ ﮐﯽ ﺗﮭﯽ ﺩﺍﺳﺘﺎﮞ ﺟﺴﮯ ﺗﻢ
ﮨﻨﺴﯽ ﻣﯿﮟ ﺍﮌﺍ ﮔﺌﮯ

Q2: What is the 4 Best sher of Amjad Islam Amjad?

Ans: Best 4 Sher of amjad Islam Amjad poetry In Urdu.

ﻣﯿﺮﯼ ﻋﻤﺮ ﺳﮯ ﻧﮧ ﺳﻤﭧ ﺳﮑﮯ ﻣﯿﺮﮮ
ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﺍﺗﻨﮯ ﺳﻮﺍﻝ ﺗﮭﮯ
ﺗﯿﺮﮮ ﭘﺎﺱ ﺟﺘﻨﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﺗﮭﮯ ﺗﯿﺮﯼ ﺍﮎ
ﻧﮕﺎﮦ ﻣﯿﮟ ﺁ ﮔﺌﮯ

اُس کے لہجے میں برف تھی لیکن
چُھو کے دیکھا تو ہاتھ جلنے لگے

سائے لرزتے رہتے ہیں شہروں کی گلیوں میں
رہتے تھے انسان جہاں اب دہشت رہتی ہے

شبنمی آنکھوں کے جُگنو کانپتے ہونٹوں کے پھول
اِک لمہ تھا جو امجد آج تک گُزرا نہیں

Similar Posts

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *