qateel shifai poetry

Qeteel Shifai Poetry: Best 40+Love qateel shifai poetry in urdu-(قتیل شفائی کی شاعری)

Spread the love

Qateel Shifai Poetry In Urdu,

Qateel Shifai, born Syed Muhammad Bechain in 1919 And His real Name is Muhammad Auranzeb Khan , is a distinguished Pakistani poet and lyricist known for his evocative Qateel Shifai poetry. His verses weave a tapestry of deep emotions and a keen awareness of society, making qateel Shifai poetry resonate across generations.

Whether exploring themes of love, heartbreak, or the complexities of human connections, his work remains a testament to his unique talent. Beyond his contributions to Urdu literature, Shifai left an enduring impact on Pakistani cinema, crafting timeless lyrics for numerous films, a testament to the versatility of qateel Shifai poetry.

His ability to express profound feelings in simple yet powerful words has solidified his place as a cultural icon in South Asia, leaving an indelible mark with every line of qateel Shifai poetry.

You May ALso Like……………Best Nasir Kazmi Poetry In Urdu

qateel shifai poetry in urdu Famous Shayari

Add a heading 20
qateel shifai poetry

گنگناتی سی کوئی رات بھی آ جاتی ہے
آپ آتے ہیں تو برسات بھی آ جاتی ہے

Gungunati si koi raat b aa jati hay
Aap aatay hay to barsaat b a jati hay

qateel shifai poetry in urdu
qateel shifai poetry in urdu

تتلیوں کا رنگ ہو یا جھومتے بادل کا رنگ
ہم نے ہر اک رنگ کو جانا ترے آنچل کا رنگ

Titleyu ka rang ho ya joomtay badal ka rang
Hum nay her ik rang ko jana teray anchal ka rang

Qateel Shifai Poetry In Urdu

qateel shifai poetry In Urdu
qateel shifai poetry In Urdu

اپنے ہاتھوں کی لکیروں میں سجا لے مجھ کو
میں ہوں تیرا تو نصیب اپنا بنا لے مجھ کو

Apnay hathu ki lakiru may saja lay muj ko
May hu tera tu naseeb apna bana lay muj ko

Best love qateel shifai poetry In Urdu Text 

qateel shifai poetry
qateel shifai poetry

جو بھی آتا ہے بتاتا ہے نیا کوئی علِاج
بَٹ نہ جائے ترا بیمار مسیحاؤں میں

Jo bhi aata hai batata hai naya koi ilaj
Butt na jaye tera bemar masihaoon main

منزل جو میں نے پائی تو ششدر بھی میں ہی تھا
وہ اس لیے کہ راہ کا پتھر بھی میں ہی تھا

Manzil jo may nay pai to shadadr b may hi tha
Wo is leye k rah ka pather b may hi tha

کیا عشق تھا جو باعث رسوائی بن گیا
یارو تمام شہر تماشائی بن گیا

Kya ishq tha jo baise ruswaye ban gaya
Yaro tamam sheher tamashai ban gaya

Qateel Shifai poetry In Urdu 2 Lines

فراز بے خودی سے تیرا تشنہ لب نہیں اترا
ابھی تک اس کی آنکھوں سے خمار شب نہیں اترا

Faraz bay khudi say tera tashna lab nahi utra
Abi tak us ki ankhu say khumaar nahi utra

دِل پہ آئے ہوئے اَلزام سے پہچانتے ہیں
لوگ اَب مجھ کو ترے نام سے پہچانتے ہیں

Dil pay aaye huway ilzam say pehchantay haan
Log ab mujh ko teray naam say pehchantay haan

اداس شام کسی خواب میں ڈھلی تو ہے
اداس شام کسی خواب میں ڈھلی تو ہے
یہی بہت ہے کہ تازہ ہوا چلی تو ہے

چلو اَچھا ہُوا کام آ گئی دیوانگی اَپنی
وَگرنہ ہم زَمانے بَھر کو سَمجھانے کَہاں جَاتے

Chalo acha hua kam aa gai dewangi apni
Wagarna ham zamanay bhar ko samjhany kahan jatay

Qateel Shifai Poetry In Urdu

دوُر تَک چَھائے تھے بَادِل اور کَہیں سَایہ نہ تھا
اِس طَرح برسَات کا مَوسم کَبھی آیا نہ تَھا

Duur tak chaye thay badil aur kahin saya na tha
Iss tarha barsat ka mausam kabhi aya na tha

گُنگُناتی ہُوئی آتی ہیں فَلک سے بُوندیں
کوئی بَدلی تیری پَازیب سِے ٹَکرائی ہے

Gungunati hui aati han falak say boondain
Koi badli teri pazaib say takrai hai

تَرکِ وَفا کے بَعد یہ اُس کی اَدا قتیلؔ
مُجھ کو سَتائے کوئی تو اُس کو بُرا لَگے

Tarak e wafa kay baad yeh uss ki adda qateel
Mujh ko sataye koi tu uss ko bura lagay

مُفلِس کے بَدن کو بھی ہے چَادر کی ضرورت
اَب کُھل کے مَزاروں پہ یہ اعلان کِیا جَائے

Muflis kay badan ko bhi hai chadar ki zarorat
Ab khull kai mazaron pay yeh elan kiya jaye

اَپنی زُباں تَو بَند ہے تُم خُود ہی سوچ لو
پَڑتا نہیں ہے یوں ہی سِتم گَر کِسی کا نام

Apni zuban tu band hai tum khud hi soch lo
Parrta nahi hai youn hi sitam-gar kisi ka naam

ہَم اِسے یاد بَہت آئیں گے
جَب اِسے بھی کوئی ٹھُکرائے گا

Ham usay yaad buhat aain gaiy
Jab usay bhi koi thukraye ga

تَھک گِیا مَیں کرتے کرتے یاَد تُجھ کو
اَب تُجھے مَیں یاد آنا چَاہتا ہوں

Thak giya main kartay kartay yaad tujh ko
Ab tujhay main yaad ana chahata hoon

لے میرے تَجربوں سے سبق اے میرے رقیب
دو چَار سال عُمر مَیں تُجھ سے بڑا ہُوں میں

Lay meray tajarbon say sabaq aye meray raqeeb
Do chaar saal umer main tujh say barra hoon main

Qateel Shifai poetry In Urdu 

مُجھ سے تُو پُوچھنے آیا ہے وَفا کے مَعنی
یہ تیری سادہ دلی مَار نہ ڈالے مُجھ کو

Mujh say tu puchanay aya hai wafa kay maeni
Yeh teri sada dili maar na dalay mujh ko

اَبھی تو بَات کَرو ہم سے دوستوں کی طرح
پھِر اِختلاف کے پہلُو نِکالتَے رہنا

Abhi tu baat karo haam say doston ki tarah
Phir ikhtalaf kay pehlo nikaltay rehna

کِیا جانے کِس اَدا سے لِیا تُو نے میرا نَام
دُنیا سَمجھ رہی ہے کہ سَچ مُچ تیرا ہوں مَیں

Kiya janay kis ada say liya tu nay mera naam
Duniya samajh rahi hai keh sach much tera hoon main

اَپنے ہَاتھوں کی لَکیروں میں سَجا لے مُجھ کو
میں ہوں تیرا تو نصیب اپنا بنا لے مُجھ کو

Apnay hathon ki lakeeron main saja lay mujh ko
Main hoon tera tu naseeb apna bana lay mujh ko

نَہ جَانے کَون سِی مَنزل پہ آ پہنچا ہے پِیار اَپنا
نَہ ہم کو اَعتبَار اَپنا نہ اُن کو اَعتبار اَپنا

Na janay kon si manzil pay aa puhancha hai piya apna
Na ham ko etibar apna na un ko etibar apna

یوں بھی پیار کے سامان بنا لیتے ہیں
اپنے قاتل کو بھی مہمان بنا لیتے ہیں

Youn bhi piyar kay saman bana letay hain
Apnay qatil ko bhi mehman bana letay hain

بہت دِنوں سے نہیں اپنے درمیاں وہ شخص
اٌداس کر کے ہمیں چل دِیا وہ شخص

Buhat dino say nahi apnay darmiyan wo shakhs
Udas kar kay hamain chal diya wo shakhs

یہ کرشمہ تیری چاہت نے دِکھایا کیسے
آ مِلا میرے بدن سے تیرا سایہ کیسے

Ye karishma teri chahat nay dikhaya kesy
Aa mila mery badan say tera saya kesy

تیری زٌلفوں کی یہ توہین نہیں تو کیا ہے
تیرے ہوتے ہوۓ بادل کوٸی چھایا کیسے

Teri zulfon ki yeh tuheen nahi tu kiya hai
Tery hotay huwy badal koi chaya kaisy

برہم ہٌوا تھا میری کِسی بات پر کوئی
وہ حادثہ ہی وجہ شناسائی بن گیا

Barham huwa tha meri kisi baat par koi
Vo hadsa hi waja shinasai ban giya

برسوں چلے قتیل زمانے کے ساتھ ہم
واقف ہٌوۓ نہ پھر بھی زمانے کی چال سے

Barsu chalay qateel zamanay k sath hum
Wakif hue na phir b zamanay ki chal say

بےرٌخی اِس سے بڑی اور بھلا کیا ہو گی
ایک مدّت سے ہمیں اٌس نے ستایا بھی نہیں

Bayrukhi iss say barri aur bhalla kiya ho gi
Aik muddat say hamain us nay sitaya bhi nahi

Final Words.

In summary, Qateel Shifai best poetry is a remarkable blend of simplicity and depth, making it both unique and easily accessible.

His mastery of language allowed him to express intricate human emotions, love, and societal observations with remarkable clarity. The universal appeal of qateel Shifai best poetry transcends linguistic and cultural barriers, resonating with a diverse audience.

His ability to convey complex feelings in a straightforward manner endears him to poetry enthusiasts. Qateel Shifai poetry legacy endures as a timeless expression of the human experience, offering solace and inspiration through the beauty of uncomplicated yet profound words.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *