munir niazi poetry

Munir Niazi Poetry: 50+Best Munir niazi poetry In urdu (منیر نیازی شاعری) – PoeticExplorers

Spread the love

Munir Niazi Poetry In Urdu,

Munir Niazi, the esteemed Pakistani poet born in 1928, has made an enduring impact on Urdu literature through his distinctive approach to Munir Niazi poetry.

His works seamlessly blend traditional and contemporary themes, resonating widely with audiences due to their simplicity and accessibility. Niazi verses delve into the complexities of love, nature, and the human experience with a profound yet easy-to-understand touch, exemplifying the essence of Munir Niazi poetry.

What sets him apart is his versatility, evident in crafting poetry not only in Urdu but also in Punjabi, showcasing a rich linguistic range within the realm of Munir Niazi poetry. Collections like “Kulliyat-e-Munir” and “Shah Jo Risalo” underscore his mastery of expression, contributing significantly to the legacy of Munir Niazi poetry.

Also Read The Post………….Best Faiz Ahmed Faiz Poetry In Urdu

His ability to articulate profound emotions with clarity makes his poetry a timeless treasure, cherished by readers across generations who appreciate the depth and beauty of Munir Niazi poetry.

Best Munir Niazi Poetry In Urdu 2 lines Text

munir niazi poetry
munir niazi poetry

اپنی ہی تیغ ادا سے آپ گھائل ہو گیا
😊 چاند نے پانی میں دیکھا اور پاگل ہو گیا

Apni hi tegh e ada say aap gahil ho gaya
Chand nay pani may dekha aur pagl ho gaya

munir niazi best poetry
munir niazi best poetry

زندہ رہیں تو کیا ہے جو مر جائیں ہم تو کیا
🥰دنیا سے خامشی سے گزر جائیں ہم تو کیا

Zinda rahay to kya hay mer jaye hum to kya
Dunia say khamoshi say guzer jaye hum to kya

Munir Niazi Poetry In Urdu

munir niazi poetry in urdu
munir niazi poetry in urdu

بے خیالی میں یوں ہی بس اک ارادہ کر لیا💕
💕 اپنےدل کے شوق کو حد سے زیادہ کر لیا

Bay khayali may yu hi bas ik irada ker lia
Apnay dil kay shok ko had say zyaida ker lia

Best munir niazi poetry In Urdu

munir niazi poetry
munir niazi poetry

تو نے مجھ کو کھو دیا میں نے تجھے کھویا نہیں
غم کی بارش نے بھی تیرے نقش کو دھویا نہیں

Tu nay muj ko kho dia may nay tuj ko khoya nahi
Ghum ki barish nay b teray naksh ko doya nahi

munir niazi poetry in urdu
munir niazi poetry in urdu

Top Romantic Munir Niazi Poetry In Urdu

خیال جس کا تھا مجھے خیال میں ملا مجھے
سوال کا جواب بھی سوال میں ملا مجھے

Khayal jis ka tha mujay khayal may mila mujay
Sawal ka jawab b sawal may mila mujay

اک اور دریا کا سامنا تھا منیرؔ مجھ کو
میں ایک دریا کے پار اترا تو میں نے دیکھا

Ik aur darya ka samna tha muneer muj ko
May aik darya k parr utra to may nay dekha

خواب ہوتے ہیں دیکھنے کے لئے
ان میں جا کر مگر رہا نہ کرو

Khawab hotay hay dekhnay k leye
Un may ja ker mager raha na karo

آواز دے کے دیکھ لو شاید وہ مل ہی جائے
ورنہ یہ عمر بھر کا سفر رائیگاں تو ہے

Awaz day k dekh lo shahid wo mil hi jaye
Warna ye umer bhar ka safar raiga to hay

سوال سارے غلط تھے جواب کیا دیتے
کسی کو اپنے عمل کا حساب کیا دیتے

Sawal saray ghalt thay jawab kya detay
Kisi ko apnay amal ka hisab kya detay

پوچھتے ہیں کہ کیا ہوا دل کو
حسن والوں کی سادگی نہ گئی

Puchtay hay k kya hua dil ko
Husan walu ki sadge na gae

جانتا ہوں ایک ایسے شخص کو میں بھی منیرؔ
غم سے پتھر ہو گیا لیکن کبھی رویا نہیں

Janta hu aik aisay shakhs ko may b muneer
Ghum say pathar ho gaya laikin kabi roya nahi

شب ماہتاب نے شہ نشیں پہ عجیب گل سا کھلا دیا
مجھے یوں لگا کسی ہاتھ نے مرے دل پہ تیر چلا دیا

Shabe mehtaab nay shay nasheen pay ajab gul sa khila dia
Mujay yu laga kisi hath nay meray dil pay teer chala dia

مجھ سے محبت بھی ہے اس کو لیکن یہ دستور ہے اس کا
غیر سے ملتا ہےہنس ہنس کر مجھ سے ہی شرماتا ہے

Muj say muhabbat b hay us ko laikin ya dastoor hay us ka
Gher say milta hay hans hans ker muj say hi shermata hay

Munir Niazi Poetry In Urdu 2 Lines Text

میں تو منیر آئینے میں خود کو تک کر حیران ہوا
یہ چہرہ کچھ اور طرح تھا پہلے کسی زمانے میں

دشت باراں کی ہوا سے پھر ہرا سا ہو گیا
میں فقط خوشبو سے اس کی تازہ دم سا ہو گیا

کچھ دن کے بعد اس سے جدا ہو گئے منیر
اس بے وفا سے اپنی طبیعت نہیں ملی

آ گئی یاد شام ڈھلتے ہی
بجھ گیا دل چراغ جلتے ہی

کچھ وقت چاہتے تھے کہ سوچیں تیرے لیے
تو نے وہ وقت ہم کو زمانے نہیں دیا

دیکھے ہوئے سے لگتے ہیں رستے مکاں مکیں
جس شہر میں بھٹک کے جدھر جائے آدمی

گلی کے باہر تمام منظر بدل گئے تھے
جو سایۂ کوئے یار اتیرا تو میں نے دیکھا

زمیں کے گرد بھی پانی زمیں کی تہہ میں بھی
یہ شہر جم کے کھڑا ہے جو تیرتا ہی نہ ہو

تھا منیر آغاز ہی سے راستہ اپنا غلط
اس کا اندازہ سفر کی رائیگانی سے ہوا

ہے منیر تیری نگاہ میں
کوئی بات گہرے ملال کی

سلام یا حسین رضی اللہ عنہ
خوابِ جمالِ عشق کی تعبیر ہے حسین
شامِ ملالِ عشق کی تصویر ہے حسین
یہ زیست ایک دشت ہے لاحد و بے کنار
اس دشتِ غم پہ اَبر کی تاثیر ہے حسین۔

کسی کو اپنے عمل کا حساب کیا دیتے
سوال سارے غلط تھے جواب کیا دیتے

کچھ وقت چاہتے تھے کہ سوچیں تیرے لیئے
تم نے وہ وقت ہم کو زمانے نہیں دیا

غم کی بارش نے بھی تیرے نقش کو دھویا نہیں تم نے
مجھ کو کھو دیا میں نے تمہیں کھویا نہیں

مجھ سے محبت بھی ہے اس کو لیکن یہ دستور ہے اس کا غیر سے ملتا ہے
ہنس ہنس کر مجھ سے ہی شرماتا ہے

شب ماہتاب نے شہ نشیں پہ عجیب گل سا کھلا دیا مجھے یوں لگا کسی
ہاتھ نے مرے دل پہ تیر چلا دیا

زندہ رہیں تو کیا ہے جو مر جائیں ہم تو کیا دنیا سے
خاموشی سے گزر جائیں ہم تو کیا

آگئی یاد شام ڈھلتے
ہی بجھ گیا دل چراغ جلتے ہی

جانتے تھے دونوں ہم اس کو نبھا سکتے نہیں
اس نے وعدہ کر لیا میں نے بھی وعدہ کر لیا

آگئی یاد شام ڈھلتے
ہی بجھ گیا دل چراغ جلتے ہی

A gae yad sham dhaltay hi
Buj gaya dil charagh jaltay hi

یہ کیسا نشہ ہے میں کس عجب خمار میں ہوں
تو آ کےجا بھی چکا ہے میں انتظار میں ہوں

Ya kaisa nasha hay may kis ajab khumaar may hu
Tu a k ja b chuka hay may intazaar may hu

جانتے تھے دونوں ہم اس کو نبھا سکتے نہیں
اس نے وعدہ کر لیا میں نے بھی وعدہ کر لیا

Jantay thay donu hum us ko niba saktay nahi
Us nay wada ker lia may nay b wada ker lia

Final Words.

In summary, Munir Niazi poetry, born from a blend of simplicity, depth, and linguistic versatility, stands as a timeless masterpiece in Urdu and Punjabi literature. Born in 1928, Niazi seamlessly merges traditional and contemporary themes, exploring the intricacies of love, nature, and the human experience.

Munir Niazi poetry is not just about linguistic mastery but also about making profound emotions accessible. His contributions create a poetic sanctuary, resonating across cultures and inviting readers into a world where feelings find eloquent expression. This poetic legacy endures, offering inspiration and connection to the human soul through the evergreen verses of Munir Niazi poetry.

Similar Posts

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *