wasi shah poetry

Wasi shah Poetry: Emotional wasi shah poetry in urdu(وصی شاہ شاعری) – Poeticexplorers

Spread the love

Wasi Shah Poetry In Urdu.

Wasi Shah, a well-known poet from Pakistan, has touched many hearts with his special way of expressing feelings through words. Born on October 25, 1981, in Sargodha, Pakistan, Wasi Shah has a gift for talking about love and relationships in a way that everyone can relate to. His simple yet powerful poetry has made him popular with a wide range of people. Besides writing poetry, he has also been active in journalism and broadcasting. Wasi Shah Poetry continue to inspire those who appreciate the beauty of the Urdu language, making his work timeless and meaningful to many.

List of Poetry Books

  • Mere Ho Kay Rahoo
  • Mujhe Sandal Kr Do
  • Ankhain Bheeg Jati Hein

Best Wasi Shah Poetry In Urdu 2024

wasi shah poetry
wasi shah poetry

کون کہتا ہے ملاقات مری آج کی ہے
تو مری روح کے اندر ہے کئی صدیوں سے

Kon kehta hai mulaqat meri aaj ki hai
Tu meri rooh ke andar hai kayi sadiyon se

Also Read The Post……….Faiz Ahmed Faiz Poetry In Urdu

wasi shah poetry in urdu
wasi shah poetry in urdu

اس جدائی میں تم اندر سے بکھر جاؤ گے
کسی معذور کو دیکھو گے تو یاد آؤں گا

Is Judai Mein Tum Andar Se Bikhar Jao Ge
Kisi Mazoor Ko Dekho Ge To Yaad Aon Ga

Wasi Shah Poetry In Urdu

wasi shah poetry in urdu
wasi shah poetry in urdu

تٌمھیں بھٌلانا ہی اوّل تو دسترس میں نہیں
جو اختیار بھی ہوتا تو کیا بھٌلا دیتے

Tumhain bhulana hi awal tu dastras mein nahi
Jo Ikhiayar bhi hota tu kia bhula dety

wasi shah poetry
wasi shah poetry

لوگوں کے چہرے پر مت جانا

چہرے سے بڑا کوئی نقاب نہیں

Logon Ke Chehray Par Mat Jana

Chehray Se Bara Koi Naqaab Nahi

Best Wasi Shah Poetry In Urdu

wasi shah poetry
wasi shah poetry

اپنے احساس سے چھو کر مجھے صندل کر دو
میں کہ صدیوں سے ادھورا ہوں مکمل کر دو

Apnay ehsas say chu kar mujhay sandal kar do
Main keh sadyoun say adhora hoon , mukamil kar do

زندگی اب کے مرا نام نہ شامل کرنا
گر یہ طے ہے کہ یہی کھیل دوبارہ ہوگا

Zindagi abb kay naam na shamil karna
Gar yeh ttaye hai keh yahi kheel dobara ho ga

یہ ہنر آپ ہی نے سِکھلایا
جو بھُلا دے اُسے بھُلا دینا

Yeh hunar aap hi nay sikhlaya
Jo bhula day usay bhula dena

Sad Wasi Shah Poetry In Urdu

کوئی بھی فیصلہ ہم سوچ کر نہیں کرتے
تمہارے نام کا سکہ اچھال رکھتے ہیں

Koi bhi faisala ham soch kar nahi kartay
Tumharay naam ka sika uchall rakhtay haan

جو مر چکے ہیں تمہیں اُن کی فکر ہے لیکن
جو مر رہے ہیں تمہیں اِن کا کچھ ملال نہیں

Jo mar chukay haan tumhain un ki fikar hay lekin
Jo marr rahay haan tumhain un ka kuch milal nahi

ہم سے زندگی کی حقیقت نہ پوچھو وصی
بہت پر خلوص لوگ تھے جو تنہا کر گئے

Hum Se Zindagi Ki Haqeeqat Nah Pucho Wasi
Bohat Pur Khaloos Log Thay Jo Tanha Kar Gaye

تیرے کوچے سے اب میرا تعلق واجبی سا ہے
مگر جب بھی گزرتا ہوں آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

Tairay Koochy Se Ab Mera Talluq Wajibi Sa Hai
Magar Jab Bhi Guzarta Hon Ankhen Bhiig Jati Hain

ہزاروں موسموں کی حکمرانی ہے مرے دل پر وصی
میں جب بھی ہنستا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

Hazaron Mousamoo Ki Hukmarani Hai Marey Dil Par Wasi
Mein Jab Bhi Hanstaa Hon To Ankhen Bhiig Jati Hain

Top Wasi Shah Poetry In Urdu 2 lines Text

سب ہی تعریف کرتے ہیں میری تحریروں کی
کبھی کوئی نہیں سنتا میرے لفظوں کی سسکیاں

sab hi tareef karte hain meri tahreeron ki
kabhi koi nahi santa mere lafzon ki shiskiyan

ترس آتا ہے مجھے اپنی معصوم سی پلکوں پر
جب بھیک کر کہتی ہیں اب رویا نہیں جاتا

Taras Aata Hai Mujhe Apni Masoom Si Palkon Par
Jab Bheek Kr Kehti Hain Ab Roya Nahi Jata

کہاں تلاش کروگے، تم مجھ جیسا شخص
جو تمہارے ستم بھی سہے اور تم سے محبت بھی کرے

Kahan Talaash Karogay, Tum Mujh Jaisa Shakhs
Jo Tumahray Sitam Bhi Sahy Aur Tum Se Mohabbat Bhi Kere

میرے چہرے سے میرا درد نہ پڑھ پاؤ گے وصی
میری عادت ہے ہر بات پر مسکرادینا۔

Mere Chehray Se Mera Dard Nah Parh Pao Ge Wasi
Meri Aadat Hai Har Baat Par Muskara Dena

میں قابل نفرت ہوں تو چھوڑ دے مجھ کو وصی
تو مجھ سے یوں دکھاوے کی محبت نہ کیا کر

Mein Qabil Nafrat Hon To Chor Day Mujh Ko Wasi
To Mujh Se Yun Dikhavay Ki Mohabbat Nah Kia Kar

یہ اند ھیرے تو سمٹ جائیں گے اک دن اے دوست
یاد آۓ گا تجھے مجھ سے گریزاں ہونا

Yeh And Andhere To Simat Jayen Ge Ik Din Ae Dost
Yaad Aye Ga Tujhe Mujh Se Gorezan Hona 

Wasi shah poetry

خوب رکھا ہے رفاقت کا بھرم اس نے وصی
کٹ چکے ہاتھ تو پھر ہاتھ ملانے آئے

Khoob Rakha Hai Rafaqat Ka Bharam Us Ne Wasi
Kat Chuke Haath To Phir Haath Milaane Aaye

جگر ھو جائے گا چھلنی یہ آنکھیں خون روئیں گی
وصی بے فیض لوگوں سے نبھا کر کچھ نہیں ملتا

Jigar Ho Jaye Ga Chhalni Yeh Ankhen Khoon Royain Gi
Wasii Be Faiz Logon Se Nibha Kar Kuch Nahi Milt

کرنے ہیں اگر شکوے محبوب سے وصی
پھر چھوڑ دے محبت کوئی اور کام کر

Karne Hain Agar Shikway Mehboob Se Wasi
Phir Chore Day Mohabbat Koi Aur Kaam Kar

کسی کی آنکھ سے سینے چرا کر کچھ نہیں ملتا
منڈیروں سے چراغوں کو بجھا کر کچھ نہیں ملتا

Kisi Ki Aankh Se Sepnay Chura Kar Kuch Nahi Milta
Mandiro Se Charaghoon Ko Bujha Kar Kuch Nahi Milta

جان سے مار دے مجھے لیکن
چھوڑ جانے کا مجھ پہ ظلم نہ کر

Jaan Se Maar Day Mujhe Lekin
Chore Jane Ka Mujh Pay Zulm Nah Kar

کب بھُلائے جاتے ہیں دوست جُدا ہو کر بھی وصی
دل ٹوٹ تو جاتا ہے ، رہتا پھر بھی سینے میں ہے

Kab Bhulae Jatay Hain Dost Juda Ho Kar Bhi Wasi
Dil Toot To Jata Hai, Rehta Phir Bhi Seenay Mein Hai

Wasi Shah Poetry In Urdu

دل کو کس بات کی سزا ہے وصی
موت تک کیوں اسے دھڑکنا ہے

Dil ko kis baat ki saza hai wasii
Mout tak kyun usay dharakna hai

سمندر میں اترتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں
تری آنکھوں کو پڑھتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

Samandar Mein Utartaa Hon To Ankhen Bhiig Jati Hain
Teri Aankhon Ko Parhta Hon To Ankhen Bhiig Jati Hain

کچھ اس لیے بھی تو بے حال ہو گئے ہم لوگ
تمہاری یاد کا بے حد خیال رکھتے ہیں

Kuch is liye b to bay hal ho gaye hum log
Tumhari yaad ka b had khayaal rakhtay hain

ترے فراق کے لمحے شمار کرتے ہوۓ
بکھر چلے ہیں ترا انتظار کرتے ہوۓ

Tere faraaq ke lamhay shumaar karte hue
Bikhar chalay hain tera intzaar karte hue

سوچتا ہوں کے اسے نیند بھی آتی ہو گی
یا میری طرح فقط اشک بہاتی ہو گی

Sochta Hon Ke Usay Neend Bhi Aati Ho Gi
Ya Meri Terhan Faqat Asshk Bahati Ho Gi

تم میری آنکھ کے تیور نہ بھلا پاؤ گے
ان کہی بات سمجھو گے تو یاد آؤں گا

Tum Meri Aankh Ke Tevare Nah Bhala Pao Ge
Un Kahi Baat Samjhoo Ge To Yaad Aon Ga

وہ تیرا غم تھا کہ تاثیر میرے لہجے کی
کہ جس کو حال سناتے اسے رلا دیتے

Woh Tera Gham Tha Ke Taseer Mere Lehjey Ki
Ke Jis Ko Haal Sunaate Usay Rulaa Dete

تمھاری یاد نے کوئی جواب ہی نہ دیا
مرے خیال کے آنسو رہے صدا دیتے

Tumhari Yaad Ne Koi Jawab Hi Nah Diya
Marey Khayaal Ke Ansoo Rahay Sada Dete

Wasi shah Love Poetry In Urdu

تمہیں بھلانا ہی اول تو دسترس میں نہیں
جو اختیار بھی ہوتا تو کیا بھلا دیتے

Tumhe Bhulana Hi Awwal To Dustarus Mein Nahi
Jo Ikhtiyar Bhi Hota To Kya Bhala Dete

کچھ غیر ایسے ملے جو اپنا بنا گئے
کچھ اپنے ایسے ملے جو غیر کا مطلب بتا گئے

Kuch Ghair Aisay Miley Jo Apna Bana Gaye
Kuch Apne Aisay Miley Jo Ghair Ka Matlab Bta Gaye

جو تو نہیں ہے تو یہ مکمل نہ ہو سکیں گی
تری یہی اہمیت ہے میری کہانیوں میں

Jo tu nahi hai to yeh mukammal nahi ho saken ge
Teri yehi ahmiyat hai meri kahaniyon mein

نہ تمہیں ہوش رہے اور نہ مجھے ہوش رہے
اس قدر ٹوٹ کے چاہو مجھے پاگل کر دو

Natumhein hosh rahe aur na mujhe hosh rahe
Is qadar toot ke chaaho mujhe paagal kar do

تمہارا نام لکھنے کی اجازت چھن گئی جب سے
کوئی بھی لفظ لکھتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

Tumhara naam likhne ki ijazat chhin gayi jab se
Koi bhi lafz likhta hoon to aankhein bheeg jaati hain

پہلے تجھے بنایا بنا کر مٹا دیا
جتنے بھی فیصلے کیے سارے غلط کیے

Phely tujhe banya kr mita dia
Jitny bhe failsy kiya sary ghalat kiya

Emotional Wasi Shah Poetry In Urdu 2 Lines Text

جیسے ہو عمر بھر کا اثاثہ غریب کا
کچھ اس طرح سے میں نے سنبھالے تمہارے خط

Jisy ho umar bhar ka asasa ghareeb ka
Kuch is tarha say main ny sanbhaly tumhry khat

اپنے احساس سے چھو کر مجھے صندل کر دو
میں کہ صدیوں سے ادھورا ہوں مکمل کر دو

Apny ehsas sy cho kar mujhe sandal kr do
Main khy sadio sy adhora hun mukamal kr do

زندگی اب کے مرا نام نہ شامل کرنا
گر یہ طے ہے کہ یہی کھیل دوبارہ ہوگا

Zindagi Ab ke Mera Naam Na shamil karna
gar ya Tay Hai khy yahi khel dobara Hoga

مدتوں اس کی خواہش سے چلتے رہے ہاتھ آتا نہیں
چاہ میں اس کی پیروں میں ہیں آبلے چاند کو کیا خبر

Mudto uski khwahish se chalte Rahe hath aata Nhe
Chah main uske pairon mein ubly Chand Ko Kya Khabar

گر سکوں چاہیے اس لمحۂ موجود میں بھی
آؤ اس لمحۂ موجود سے باہر نکلیں

Gar Sako chahie is lamha maujud main bhi
Ao is lamhy mojod say bhair niklin

sad Wasi shah Poetry

ہر ایک موسم میں روشنی سی بکھیرتے ہیں
تمہارے غم کے چراغ میری اداسیوں میں

Har aik mausam mein roshni se bhekirty hain
Tumhare gham ke chirag meri udasion main

ہر اک مفلس کے ماتھے پر الم کی داستانیں ہیں
کوئی چہرہ بھی پڑھتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

Har ik mufals ke maathe par alam ki dastaanain hain
Koi chehra bhi parhta hoon to aankhein bheeg jaati hain

مجھے خبر تھی کہ اب لوٹ کر نہ آؤں گا
سو تجھ کو یاد کیا دل پہ وار کرتے ہوئے

Mujhe khabar thi ke ab laut kar na aaon ga
So tum ko yaad kya dil pe waar karte hue

یقین مانوکوئی مجبوریاں نہیں ہوتیں
لوگ عادتاَ وفانہیں کرتے۔

Yaqeen mano koi majbooriyan nahi hoti
Log aadatan wafah nahi karte.

ہم غریب اچھے ہیں دنیا دار لو گوں سے و صیؔ
ہم اپنے خواب ضرور تو ڑتے ہیں کسی کا دل نہیں۔

Hum ghareeb ache hain duniya daar loog se
Hum apne khwab zaroor tutay hain kisi ka dil nahi

وصی یقین ہے مجھ کو وہ لوٹ آئے گا
اسے بھی اپنے کیے کاملال ہونا ہے ۔

Wasi yaqeen hai mujh ko woh laut aaye ga
Isay bhi apnay kiye kaamil hona hai

میری تو پور پور میں خوشبو سی بس گئی
اس پر ترا خیال ہے اور چاند رات ہے

Meri to poor poor mein khushboo si bas gayi
Is par tera khayaal hai aur chaand raat hai

فلک پے چاند کے حالے بھی سوگ کرتے ہیں
جو تو نہیں تواُجالے بھی سوگ کرتے ہیں

Falak Pay Chand Kay Haaly Bhe Sogh Krty Hen
Jo Tou Nahi Tu Ujaly Bhe Sogh Krty Hen

تم سے محبت کر کے ہم بہت پچھتا رہے ہیں
کاش سزائے محبت سے سزائے موت اچھا تھا

Tum Se Mohabbat Kar K Hum Bohot Pachta Rahe Hain
Kash Sazaa-E-Mohabbat Se Sazaa-E-Maut Achha Tha

کب نہیں ناز اُٹھائے ہیں تمہارے میں نے
دیکھو آنچل پے سجاۓ ہیں ستارے میں نے

Kab Nahin Naaz Uthaye Hain Tumhare Mai Ne
Dekho Aanchal Pe Sajaye Hain Sitare Mai Ne

ہوتی ہوگی میرے بوسے کی طلب میں پاگل
جب بھی زلفوں میں کوئی پھول سجاتی ہوگی

Hoti ho ge meray boosay ki talab may pagal
Jab b zulfu may koi phool sajati ho ge

حجر کا تارا ڈوب چلا ہے ڈھلنے لگی ہے رات وصی
قطرہ قطرہ برس رہی ہے اشکوں کی برسات وصی

Hijr Ka Taara Doob Chala Hai Dhalne Lagi Hai Raat Wasi
Katra Katra Baras Rahi Hai Ashkon Ki Barsaat Wasi Poetry/

اداسیوں سے وابستہ ہے یہ زندگی میری وصی
خدا گواہ ہے کے پھر بھی تجھے یاد کرتے ہیں

Udasiyon Se Wabasta Hai Yeh Zindagi Meri ‘WASI’
Khuda Gawaah Hai K Phir Bhi Tujhe Yaad Karte Hain

Wasi shah poetry In Urdu

کون کہتا ہے کے موت آۓ گی اور میں مر جاوّں گا
میں تو دریا ہوں سمندر میں اُتّر جاوّں گا

Kon Kehta Hai K Maut Aayegi Aur Main Mar Jaoonga
Main To Dariya Hoon Samandar Main Uttr Jaoonga

دھیرے سے سرکتی ہے رات اُس کے آنچل کی طرح
اُس کا چہرا نظر اتا ہے جھیل پیں کنول کی طرح

Dheeray Se Sarakti Hai Raat Us Ke Aanchal Ki Tarah
Uska Chehra Nazar Aata Hai Jheel Main Kanwal Ki Tarah

نہیں ھوتا کسی طبیب سے اس مرض کا علاج وصی
عـــشـــق لا عــلاج ھـــــے ، بس پــــرہــیــز کیجیے

Nahi Hota Kisi Tabib Se Is Marz Ka Ilaaj Wasi
Ishq Laa Ilaaj Hai, Bas Parheez Kijiye

یہ جو چہرے سے تمہیں لگتے ہیں بیمار سے ہم
خوب روئے ہیں لپٹ کر در و دیوار سے ہم

Ye Jo Chehre Se Tumhen Lagte Hain Bimar Se Hum
Khob Roye Hain Lipat Kar Dar-O-Deewar Se Hum

دل کو کس بات کی سزا ہے وصی
موت تک کیوں اسے دھڑکنا ہے

Dil ko kis bat ki saza hay wasi
Mot tak kyu usay darakna hay

Wasi shah Poetry

اندھیری رات میں رہتے تو کِتنا اچھا تھا
ہم اپنی ذات میں رہتے تو کِتنا اچھا تھا

Andayre rat may rehtay to kitna acha tha
Hum apni zaat may rehtay to kitna acha tha

جو تو نہیں ہے تو یہ مکمل نہ ہو سکیں گی
تری یہی اہمیت ہے میری کہانیوں میں

Jo tu nahe hay to yeh mukammal na ho sakay ge
Tere yehi ahmiat hay mere kahaniyu may

Final Words

In conclusion, Wasi Shah’s influence in the realm of Urdu poetry is truly exceptional, firmly rooted in the captivating essence of “Wasi Shah poetry.” His verses, imbued with raw emotion and an undeniable authenticity, have etched an indelible mark on the hearts of countless readers who find solace and insight within the realm of “Wasi Shah poetry.”

Wasi Shah’s poetic prowess knows no bounds, skillfully weaving together the universal themes of love, longing, and the myriad challenges of life, all the while preserving the integrity of “Wasi Shah poetry.”

His enduring contributions to the world of literature vividly illustrate the profound impact that artfully crafted words can have on the human spirit, solidifying his status as a cherished poet whose work, encapsulated in “Wasi Shah poetry,” continues to resonate and inspire for generations to come.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *