meer taqi meer poetry in urdu

Meer Taqi Meer Poetry: Best Meer taqi meer sad poetry In urdu 2 lines (میر تقی میر شاعری۔)

Spread the love

Meer Taqi Meer Poetry In Urdu,

Mir Muhammad Taqi Known As Meer Taqi Meer. Mir Taqi Mir was born In Agra. In the heart of 18th-century India, there existed a luminary Mir Taqi Meer. His poetic verses weren’t mere ink on paper but emotions immortalized in words. Meer Taqi Meer poetry, particularly his ghazals, painted vivid canvases of love, pain, and the intricate tapestry of human existence.

His mastery lay in the art of weaving metaphors and imagery that resonated with the depths of our souls. The legacy of Meer Taqi Meer poetry endures, remaining a timeless beacon that speaks to hearts across ages and cultures, transcending the constraints of language.

Trending Post This Month.

Top Meer Taqi Meer Poetry In Urdu 2 lines

meer taqi meer poetry in urdu
meer taqi meer poetry in urdu

غم رہا جب تک کہ دم میں دم رہا
دل کے جانے کا نہایت غم رہا

Ghum raha Jab tak k dam may dam raha
Dil k janay ka nihayat ghum raha

Meer Taqi Meer poetry In Urdu

meer taqi meer poetry
meer taqi meer poetry

جب کے پہلو سے یار اٹھتا ہے
درد بے اختیار اٹھتا ہے

Jab k pehlu say yaar uthta hay
Dard bayikhtiyar uthta hay

mir taqi mir poetry in urdu
mir taqi mir poetry in urdu

بارےدنیا میں رہو غم زدہ یا شاد رہو
ایسا کچھ کر چلو یاںکہ بہت یاد رہو

Baray duniya may raho ghum zada ya shad raho
Aisa kuch ker chalo ya k bohat yad raho

meer taqi meer poetry in urdu
meer taqi meer poetry in urdu

اس کا خیال چشم سے شب خواب لے گیا
قسمے کہ عشق جی سے مرے تاب لے گیا.

Us ka khyal chasham say shabe khuwab lay gaya
Kasmay k ishq ji say meray taab lay gaya

Top Meer Taqi Meer poetry in urdu Text

meer taqi meer poetry
meer taqi meer poetry

جور کیا کیا جفائیں کیا کیا ہیں
عاشقی میں بلائیں کیا کیا ہیں

Jor kya kya jaaphain kya kya hay
Aashikee mein balaye kya kya hain

meer taqi meer poetry in urdu text
meer taqi meer poetry in urdu text

MIr Taqi Mir Poetry In Urdu

meer taqi meer poetry in urdu 2 lines
meer taqi meer poetry in urdu 2 lines

آگے جمال یار کے معذور ہو گیا
گل اک چمن میں دیدۂ بے نور ہو گیا

Agay jamale yar k mazoor ho gaya
Gul ik chaman may deeda e bay noor ho gaya

meer taqi meer poetry in urdu
meer taqi meer poetry in urdu

دلی کے نہ تھے کوچے اوراق مصور تھے
جو شکل نظر آئی تصویر نظر آئی

Dehli k na thay koochay aurak musawer thay
Jo shakal nazer aye tasweer nazer aye

meer taqi meer poetry in urdu
meer taqi meer poetry in urdu

بے وفائی پہ تیری جی ہے فدا
قہر ہوتا جو باوفا ہوتا

Baywafayi pay tere g hay fida
Kehar hota jo bawafa hota

meer taqi meer poetry in urdu
meer taqi meer poetry in urdu

زخم جھیلے داغ بھی کھائے بہت
دل لگا کر ہم تو پچھتائے بہت

Zakham jeelay dagh b khaye bohat
Dil laga ker hum to pachtaye bohat

Meer Taqi Meer Poetry

mir taqi mir poetry
mir taqi mir poetry

Mir Taqi Mir Poetry In Urdu 2 Lines text

میر ان نیم باز آنکھوں میں
ساری مستی شراب کی سی ہے

Meer un neem baz ankhu may
Sare masti sharab ki si hay

میر صاحب زمانہ نازک ہے
دونوں ہاتھوں سے تھامیے دستار

Meer sahab zamana nazuk hay
Dono hathu say thamiye dastaar

People May Also Like…………….Best Wasi shah Poetry In Urdu 2 lines

سخت کافر تھاجس نے پہلے
میر مذہب عشق اختیار کیا

Sakhat kafir tha jis nay pehlay
Meer mazab ishq ikhtiyar kia

کیا کہوں تم سے میں کہ کیا ہے عشق
جان کا روگ ہے بلا ہے عشق

Kya kahu tum say k kya hay ishq
Jan ka rog hay bala hay ishq

شام سے کچھ بجھا سا رہتا ہوں
دل ہوا ہے چراغ مفلس کا

Sham say kuch bujha sa rahta hun
Dil hua hai chirag muflis ka

راہ دور عشق میں روتا ہے کیا
آگے آگے دیکھیے ہوتا ہے کیا

Rah-e-dur-e-ishq mai rota hai kya
Aage aage dekhiye hota hai kya

میرؔ بندوں سے کام کب نکلا
مانگنا ہے جو کچھ خدا سے مانگ

Meer bandu sy kaam kab nikla
Magna hay jo kuch khuda say mang

میرؔ عمداً بھی کوئی مرتا ہے
جان ہے تو جہان ہے پیارے

Mir amdan b koi marta hai
Jaan hai to jahan hai piyare

میرے رونے کی حقیقت جس میں تھی
ایک مدت تک وہ کاغذ نم رہا

Mere rone ki haqeeqat jis mai thi
Ek muddat tak wo kaghaz nam raha

مت سہل ہمیں جانو پھرتا ہے فلک برسوں
تب خاک کے پردے سے انسان نکلتے ہیں

Mat sehal hamain jaano phirta hai falak barson
Tab khak k parde se insaan nikalte hain

Top Meer Taqi Meer Poetry In urdu Text

مصائب اور تھے پر دل کا جانا
عجب اک سانحہ سا ہو گیا ہے

Masaib aur they par dil ka jaana
Ajab ik saneha sa ho gaya hai

مرثیے دل کے کئی کہہ کے دئیے لوگوں کو
شہر دلی میں ہے سب پاس نشانی اس کی

Marsiye dil k kai kah ke diye logon ko
Shahr-e-dilli mai hai sab paas nishani us ki

مرگ اک ماندگی کا وقفہ ہے
یعنی آگے چلیں گے دم لے کر

Marg ik mandgi ka waqfa hai
Yaani aage chalenge dam le kar

بے خودی لے گئی کہاں ہم کو
دیر سے انتظار ہے اپنا

Be-khudi le gayi kahan hum ko
Der se intezaar hai apna

ناحق ہم مجبوروں پر یہ تہمت ہے مختاری کی
چاہتے ہیں سو آپ کریں ہیں ہم کو عبث بدنام کی

Nahaq hum majburon par ye tohmat hai mukhtari ki
Chahtay hain so aap karein hain hum ko abas badnam kia

کیا کہیں کچھ کہا نہیں جاتا
اب تو چپ بھی رہا نہیں جاتا

Kya kahein kuch kaha nahi jaata
Ab toh chup b raha nahi jaata.

شرط سلیقہ ہے ہر ایک امر میں
عیب بھی کرنے کو ہنر چاہئے

Shart saliqa hai har ek amr mein
Aib bhi karne ko hunar chaahiye.

وصل میں رنگ اڑ گیا میرا
کیا جدائی کو منہ دکھاؤں گا

Vasl mein rang ud gaya mera
Kya judai ko munh dikhaunga.

Mir Taqi Mir sad poetry

گل ہو مہتاب ہو آئینہ ہو خورشید ہو میر
اپنا محبوب وہی ہے جو ادا رکھتا ہو

Gul ho mahtab ho aina ho khurshid ho meer
Apna mahboob vahi hai jo ada rakhta ho.

یہی جانا کہ کچھ نہ جانا ہائے
سو بھی ایک عمر میں ہوا معلوم

Yahi jaana ki kuch na jaana haaye
So bhi ek umar mein hua maaloom.

عشق میں جی کو صبر و تاب کہاں
اس سے آنکھیں لڑیں تو خواب کہاں

Ishq mein ji ko sabr o taab kahan
Us se aankhein ladin toh khwaab kahan.

میر ہم مل کے بہت خوش ہوئے تم سے پیارے
اس خرابے میں میری جان تم آباد رہو

Meer hum mil ke bahut khush hue tum se pyare
Is kharabe mein meri jaan tum abad raho.

فقیرانہ آئے صدا کر چلے
کہ میاں خوش رہو ہم دعا کر چلے

Faqeerana aye sada ker chalay
K mia khush raho hum duaa ker chalay

ہستی اپنی حباب کی سی ہے
یہ نمائش سراب کی سی ہے

Hasti apni habab ki si hay
Yeh numaish sarab ki si hay

دیکھ تو دل کہ جاں سے اٹھتا ہے
یہ دھواں سا کہاں سے اٹھتا ہے

Dekh To dil k jah say uthta hay
Yeh Duha kaha say uthta hay

مِرے سلیقے سے میری نِبھی محبّت میں
تمام عُمر میں ناکامیوں سے کام لیا

Meray salikay say mere nabi mohabbat may
Tamam umer may nakamiyu say kaam lia

پیدا کہاں ہیں ایسے پراگندہ طبع لوگ
افسوس تم کو میرؔ سے صحبت نہیں رہی

Paida kaha hay aisay paraganda taba log
Afsos tum ko meer say sohbat nahe rahe

اس عہد میں الٰہی محبت کو کیا ہوا
چھوڑا وفا کو ان نے مروت کو کیا ہوا.

Is ehad may ilahi mohabbbat ko kya hua
Chora wafa ko un nay murawwat ko kya hua

راہِ دورِ عشق میں روتا ہے کیا
اگے اگے دیکھئے ہوتا ہے کیا

Rah-e-dur-e-ishq men rota hai kya
Aage aage dekhiye hota hai kya

لب ترے لعل ناب ہیں دونوں
پر تمامی عتاب ہیں دونوں

میرے سلیقے سے میری نبھی محبت میں
تمام عمر میں نایکامیوں سے کام لیا

تیرا چہرہ فرشتوں کے حسن کو شرمندہ کر دیتا ہے
آپ کے مکرم چال کے مقابلے میں، تیتر لنگڑا ظاہر ہوتا ہے

وہ سر جو آج اونچا ہے کیونکہ وہ تاج پہنتا ہے
کل، یہاں خود، نوحہ میں ڈوب جائے گا

ان افقوں کی دنیا سے کون محفوظ رہا؟ راستہ
بچھایا اور خالی ہاتھ ہر مسافر نے حصہ لیا۔

Final Words.

Meer Taqi Meer poetry, a timeless embodiment of the human experience, continues to resonate across generations, transcending temporal boundaries. His verses, enriched with emotion and vibrant imagery, stand as an everlasting reservoir of wisdom, providing solace and profound insights into life’s intricate tapestry, notably expressed in Mir Taqi Mir poetry in Urdu.

Mir’s adeptness in encapsulating the delicate nuances of human emotions within his ghazals firmly establishes him as a luminary in Urdu literature. His legacy stands as an enduring source of inspiration, inviting readers to explore the profound beauty and universality of Mir Taqi Mir poetry in Urdu, allowing a deeper understanding of the human heart.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *