parveen shakir romantic poetry

Parveen Shakir Poetry: Best Parveen shakir Poetry Romantic in urdu (پروین شاکرشاعری)

Spread the love

Parveen Shakir Poetry In Urdu,

Parveen Shakir, an undisputed maestro in the realm of Urdu literature skillfully wove an unparalleled masterpiece with her evocative Parveen Shakir poetry. What makes her Parveen Shakir poetry truly exceptional is that she wasn’t solely a poetic virtuoso; boasting a PhD in linguistics, she seamlessly blended academic prowess with artistic finesse.

The magic of “Khushboo,” her seminal collection, lies in its enchanting tales of love, intellect, and societal intricacies, showcasing the quintessence of Parveen Shakir poetry. It’s not just poetry; it’s a lyrical journey through Parveen Shakir’s unique lens. Imagine the perfect fusion of bureaucratic brilliance and poetic prowess, a hallmark of Parveen Shakir poetry.

From her early days as a radio presenter to her iconic status in literary circles, Shakir’s trajectory is as compelling as the heartfelt verses she penned, firmly establishing her as a luminary in the realm of Parveen Shakir poetry. Her legacy echoes not just with rhymes but with a timeless resonance that goes beyond the conventional boundaries of poetry, making her best poetry a cherished gem in Urdu literature.

People May Also like………Meer Taqi Meer Poetry in urdu 2 lines.

Best Parveen Shakir Poetry SMS In Urdu two lines

parveen shakir poetry
parveen shakir poetry

کیسے کہہ دوں کہ مجھے چھوڑ دیا ہے اس نے
بات تو سچ ہے مگر بات ہے رسوائی کی

Kaisay keh don ke mujay chorr dia us ne
Baat to sach hay magar baat hay ruswai Ki

Parveen Shakir Poetry In Urdu

parveen shakir poetry in urdu
parveen shakir poetry in urdu

اس کے یوں ترک محبت کا سبب ہو گا کوئی
جی نہیں یہ مانتا وہ بیوفا پہلے سے تھا

Us k yu tark e mohabbat ka sabab ho ga koi
G nahe manta wo baywafa pehlay say tha

parveen shakir poetry in urdu
parveen shakir poetry in urdu

کوئی آہٹ، کوئی آواز، کوئی چاپ نہیں
دل کی گلیاں بڑی سنسان ہیں، آئے کوئی

Koi ahat koi awaz koi chap nahi
Dil ki galiya bare sunsaan hay aye koi

Top parveen shakir poetry In Urdu 2 Lines

parveen shakir romantic poetry
parveen shakir romantic poetry

اک نام کیا لکھاترا ساحل کی ریت پر
پھر عمر بھرہوا سے میری دشمنی رہی

Ik name kiya likha tera sahil ki rait per
Phir umer bhar hawa say meri dushmani rahi

parveen shakir romantic poetry 

You may Also Read The Post……….Best Joun Elia poetry In Urdu

parveen shakir poetry in urdu
parveen shakir poetry in urdu

کٌچھ تو ہوا بھی سرد تھی کچھ تھا تیرا خیال بھی
دِل کو خوشی کے ساتھ ساتھ ہوتا رہا ملال بھی

Kuch to hawa b sard thi kuch tha tera khiyal b
Dil ko khushi kay sath sath hota raha malal b

parveen shakir romantic poetry
parveen shakir romantic poetry

وہ رُوح میں خُوشبو کی طرح ہو گیا تحلیل
جو دُور بہت چاند کے ہالوں کی طرح تھا

Wo rooh may khusboo ki tarah ho gaya tehleel
Jo door bohat chand k halu ki tarah tha

Parveen Shakir Poetry In Urdu

parveen shakir romantic poetry
parveen shakir romantic poetry

Heart Touching parveen shakir poetry in urdu two lines

آخر وہ بھی کہیں ریت پہ بیٹھی ہوگی
تیرا یہ پیار بھی دریا ہے اتر جائے گا

Akhir wo b kahi rait per baithe ho ge
Tera ya payar b darya hay uter jaye ga

Perveen Shakir poetry in urdu
Perveen Shakir poetry in urdu

اِس دِل میں شوقِ دید زیادہ ہی ہو گیا
اُس آنکھ میں میرے لئے اَنکار جب سے ہے

Is dil may shok e deed zaida hi ho gaya
Us ankh may meray leye inkaar jab say hay

parveen shakir romantic sad poetry
parveen shakir romantic sad poetry

زندگی میں یہ ہنر بھی آزمانا چاہیے
جنگ کسی اپنے سے ہو تو ہار جانا چاہئے

Zindgi may yeh huner b azmana chaye
Jang kisi pnay say ho to haar jana chaye

parveen shakir romantic poetry
parveen shakir romantic poetry

یہ کب کہتی ہوں تم میرے گلے کا ہار ہو جاؤ
وہیں سے لوٹ جانا تم جہاں بیزار ہو جاؤ

Yeh kab kehti hu tum meray galay ka haar ho jayo
Wahi say lot jana tum jaha bezaar ho jayo

perveen shakir poetry in urdu
perveen shakir poetry in urdu

یاد کر کے مجھے نم ہو گئی ہوں گی پلکیں
آنکھ میں پڑ گیا کچھ کہہ کر یہ ٹالا ہوگا

Yad ker k mujay num ho gaye hu ge palkay
Ankh may par gaya kuch keh ker yeh tala ho ga

حُسن کے سمجھنے کو عُمر چاہیے جاناں
دو گھڑی کی چاہت میں لڑکیاں نہیں کھلتیں

Husan k samajnay ko umer chaye jana
Do gare ki chahat may larkiye nahi khulti

تعلقات کے برزخ میں ہی رکھا مجھ کو
وہ میرے حق میں نہ تھا اور خلاف بھی نہ تھا

Talukat k burzkh may hi rakha muj ko
Wo meray hak may na tha aur khilaf b na tha

دل کا کیا ہے وہ تو چاہے گا مسلسل ملنا
وہ ستم گر بھی مگر سوچے کسی پل ملن

Dil ka kya hay wo chaye ga musalsal milna
Wo sitam gher b mager sochay kisi pal milan

سَب سے نظر بچا کے وہ مُجھ کو کُچھ ایسے دیکھتا
ایک دفعہ تو رُک گئی، گردش ماہ و سال بھی

Sab say nazer bacha k wo muj ko kuch aisay dekhta
Aik dafa to ruk gae gerdish mah o sal b

وہ تو جاں لے کے بھی ویسا ہی سبک نام رہا
عشق کے باب میں سب جرم ہمارے نکلے

Wo to jah lay k b waisa hi subak naam raha
Ishq k bab may sab jurm hamaray niklay

برسات میں بھی یاد نہ جب اُن کو ہم آئے​
پھر کون سے موسم سے کوئی آس لگائے​

Bersaat may b yad na jab un ko hum aye
Phir kon say mosam say koi aas lagaye

میں عشق کائنات میں زنجیر ہو سکوں
مجھ کو حصارِ ذات کے شہر سے رہائی دے

May eshq kainaat may zangeer ho saku
Muj ko ehsare e zaat k shehr say rehae day

Parveen Shakir Poetry In urdu

‏اُس سے اِک بار تو رُوٹھوں میں اُسی کی مانند
اور مری طرح سے وہ مُجھ کو منانے آئے

Us say ik baar to ruthu may use ki manid
Aur mere tarah say wo muj ko mananay aye

‏ایک اِک کر کے مجھے چھوڑ گئیں سب سکھیاں
آج میں خُود کو تری یاد میں تنہا دیکھوں

Ik ik ker k mujay chor gae sab sakheye
Aaj may khud ko tere yad may tanha dekhu

Parveen Shakir Poetry Romantic In Urdu

میں اپنی دوستی کو شہر میں رسوا نہیں کرتی
محبت میں بھی کرتی ہوں مگر چرچا نہیں کرتی

Main shahar mein apanee dostee ko badanaam nahin karata
Main bhee pyaar karata hoon lekin main isake baare mein baat nahin karata

لڑکیوں کے دکھ عجب ہوتے ہیں سکھ اِس سے عجب
ہنس رہی ہیں اور کاجل بھیگتا ہے ساتھ ساتھ

Larkiyu k dukh ajab hotay hay sukh is say ajab
Hans rahe hay aur kajal beegta hay sath sath

میں پھول چنتی رہی اور مجھے خبر نہ ہوئی
وہ شخص آ کے مرے شہر سے چلا بھی گیا

Main phool chunte rahe aur mujhe khabar na hue
Wo shaks a k meray shehr say chala b gaya

وہ اپنی ایک ذات میں کُل کائنات تھا
دنیا کے ہر فریب سے ملوا دیا مجھے

Wo apni aik zaat may kul kainaat tha
Dunyia k her feyreb say milwa dia mujay

کتنی معصوم خواہش ہے اس دیوانی لڑکی کی
چاہتی ہے محبت بھی کرے اور خوش بھی رہے

Kitni mahsoom khawaish hay is dewani larki ki
Chahte hay mohabbat b karay aur khush b rahay

جو بادلوں سے بھی مجھ کو چھپائے رکھتا تھا
بڑھی ہے دھوپ تو بے سائبان چھوڑ گیا

Jo badlu say b muj ko chupaye rakhta tha
Bare hay doop to bay saibah chor gaya

اب تو اس راہ سے وہ شخص گزرتا بھی نہیں
اب کس اُمید پہ دروازے سے جھانکے کوئی

Ab to is rah say wo shaks guzerta b nahi
Ab kis umeed pay derwazay say jankay koi

ممکنہ فیصلوں میں ایک ہجر کا فیصلہ بھی تھا
ہم نےتو بات کی،اس نے کمال کر دیا

Mumkana faisalu may aik hijar ka faisala b tha
Hum nay to bat ki us nay kamal ker dia

میں پھول چنتی رہی اور مجھے خبر نہ ہوئی
وہ شخص آ کے مرے شہر سے چلا بھی گیا

Main phool chunti rahi aur mujhy khabar na hui
Wo shakhs aa kay mery shehr say chala b giya

وہ اپنی ایک ذات میں کُل کائنات تھا
دنیا کے ہر فریب سے ملوا دیا مجھے

Wo apni aik zaat main kul kainat tha
Duniya kay har faraib say milwa diya mujhay

موسم کا عذاب چل رہا ہے
بارش میں گلاب جل رہا ہے

Mausam ka azab chal raha hay
Barish main gulab jal raha hay
جس طرح خواب مرے ہو گئے ریزہ ریزہ
اس طرح سے نہ کبھی ٹوٹ کے بکھرے کوئی

Jis tarah khawab meray ho gaye reza reza
Us tara say na kabi toot k bikhray koi

اپنے کردار کو موسم سے بچائے رکھنا
لوٹ کر پھول میں واپس نہیں آتی خوشبو

Apnay kirdaar ko mosam say bachaye rakhna
Lot ker phool may wapis nahe aate khusboo

تم نے تو تھک کر دشت میں خیمے لگالئے
تنہا کٹے کسی کا سفر تم کو اس سے کیا

parveen shakir poetry in urdu

Also Read The Post…..Top Birthday Wishes In Urdu

جب سے پرواز کے شریک ملے
گھر بنانے کی آرزو ہے بہت

Jab say pervaaz k shareek milay
Gher bananay ki arzoo hay bohat

بس یہ ہُوا کہ اس نے تکلیف سے بات کی
اور ہم نے روتے روتے دوپٹے بھگو لئے

Bas yeh hua k us nay takleef say baat ki
Aur hum nay rotay rotay dupatay bigo leye

میری طلب تھا اک شخص، وہ جو نہیں ملا تو پھر
ہاتھ دعا سے یوں گرا، بھول گیا سوال بھی

Mere talab tha ik shaks wo jo nahi mia to phir
Hath dua say yu gira bhool gaya sawal b

رفاقتوں کے نئے خواب خوش نما ہیں مگر
گزر چکا ہے ترے اعتبار کا موسم

Rafaqaton ke nai khawab khushnuma hain magar
Guzar chuka hai teri aitbaar ka mausam

خود اپنے سے ملنے کا تو یارا نہ تھا مجھ میں
میں بھیڑ میں گم ہو گئی تنہائی کے ڈر سے

Khud apne say milne ka to yaara na tha mujh mai
Mai bheer mai gum ho gai tanhai ke dar say

دروازہ جو کھولا تو نظر آئے کھڑے وہ
حیرت ہے مُجھے آج کِدھر بھول پڑے وہ

Darwaza jo khola tu nazar aye kharry wo
Hairat hai mujhy aaj kidhar bhool parry wo

شب کی تنہاٸی میں اب توا کثر
گٌفتگو تٌجھ سے رہا کرتی ہے

Shab ki tanhai main ab to aksar
Guftgu tuj say raha karti hai

ظلم سہنا بھی تو ظالم کی حمایت ٹھہرا
خامشی بھی تو ہوٸی پشت پناہی کی طرح

Zulm sehna bhi tu zalim ki hamayat tehra
Kjamoshi bhi tu hui pusht panahi ki tarah

تو بدلتا ہے تو بے ساختہ میری آنکھیں
اپنے ہاتھوں کی لکیروں سے اٌلجھ جاتی ہیں

Tu badalta hai tu bay sakhta meri aankhen
Apny hathon ki lakeeron say ulajh jati hain

Tum nay to thak ker dasht may khaimay laga leye
Tanha katay kisi ka safar tum ko us say kia

میرے لفظوں کو ڈھونگ کہتے ہیں
لوگ خاک کے بندوں کی سوچ خاک ہی رہی

Meray lafzu ko dhong kehtay hay
Log khak k bandu ki soch khak hi rahe

سوکھے ہوئے پتوں کو غرض کیا ہو بہار سے
اس کی عید کہاں جو بچھڑے ہو اپنے یار سے

Sookhay huay patu ko gharz kya ho bahar say
Us ki eid kaha jo bicharay ho apnay yar say

Parveen Shakir Poetry In Urdu

اب بھی برسات کی راتوں میں بدن ٹوٹتا ہے
جاگ اٹھتی ہیں عجب خواہشیں انگڑائی کی

Ab b bersaat ki ratu may badan tootta hay
Jag uthte hay ajab khawaishe anghrae ki

ہم تو سمجھے تھے کہ اک زخم ہے بھر جائے گا
کیا خبر تھی کہ رگ جاں میں اتر جائے گا

Hum to samjay thay k ik zakham hay bher jaye ga
Kya khabar thi k rag e jan may uter jaye ga

اب کے ہوا کے ساتھ ہے دامن یار منتظر
بانوئے شب کے ہاتھ میں رکھنا سنبھال کر دیا

Ab k hawa k sath hay daman yar mutazir
Banwe shab k hath may rakhna sanbaal ker dia

اس نے جلتی ہوئی پیشانی پہ جب ہاتھ رکھا
روح تک آ گئی تاثیر مسیحائی کی

Us ki jalti hue payshani pay jab hath rakha
Rooh tak a gae taseer maseehaye ki

چہرہ و نام ایک ساتھ آج نہ یاد آ سکے
وقت نے کس شبیہ کو خواب و خیال کر دیا

Chera o naam aik sath aaj na yad a sakay
Waqt nay kis shabi ko khawab o khayal ker dia

تیرا پہلو ترے دل کی طرح آباد رہے
تجھ پہ گزرے نہ قیامت شب تنہائی کی

Tera pehlu taray dil ki tara abad rahay
Tuj pay guzray na kayamat shabe tanhae ki

Sad Parveen Shakir Poetry In Urdu

آخر وہ بھی کہیں ریت پہ بیٹھی ہوگی
تیرا یہ پیار بھی دریا ہے اتر جائے گا

Akhir wo b kahi rait per baithe ho ge
Tera ya payar b darya hay uter jaye ga

میں اسکی دسترس میں ہوں مگر وہ
مجھے میری رضا سے مانگتا ہے

May us ki dastarast may hu mager wo
Mujay mere raza say mangta hay

وہ کہیں بھی گیا، لوٹا تو میرے پاس آیا
بس یہی بات ہے اچھی میرے ہرجائی کی

Wo kahi b gaya lota to meray pas aya
Bus yahi bat hay achi meray herjae ki

تیری دنیا سے نکل جاؤں میں خاموشی کے ساتھ
قبل اس کے تو میرے ساۓ سے کترانے لگے

Tere dunyia say nikal jayu may khamoshi k sath
Kabal us k to meray saye say katranay lagay

موت کی آہٹ سنائی دے رہی ہے دل میں کیوں
کیا محبت سے بہت خالی یہ گھر ہونے کو ہے

Mot ki ahat sunaye day rahi ray dil may kyu
Kya muhabbat say boht khali ya ger honay ko hay

ہر چیز فاصلے پہ نظر آتی ہے مجھے
ایک شخص زندگی میں ہوا مجھ سے دور کیا

Her cheez faslay pay nazar aate hay mujay
Ik shaks zindgi may hua muj say door kya

مدتوں بعد اس نے آج مجھ سے کوئی گلہ کیا
منصب دلبری پہ کیا مجھ کو بحال کر دیا

Mudatu bad us nay aaj muj say koi gila kia
Mansab e dilbare pay kya muj ko bahal ker dia

کون چاہے گا تمہیں میری طرح
اب کسی سے نہ محبت کرنا

Kon chahe ga tumay mere tara
Ab kise say na muhabbat karana

بہت سے لوگ تھے مہمان میرے گھر لیکن
وہ جانتا تھا کہ ہے اہتمام کس کے لئے

Bohat say log thay mehmaan meray gher laikin
Wo janta tha k hay ahtamam kis k leye

دشمنوں کے ساتھ میرے دوست بھی آزاد ہیں
دیکھنا ہے کھینچتا ہے مجھ پہ پہلا تیر کون

Dushmanon ke saath-saath mere dost b aazaad hain
Dekhate hain khichta hay mujh par pehala teer kon

parveen shakir poetry romantic 

Also Read The Post………Best Eyes Poetry In Urdu

وہ تو خوشبو ہے ہواوں میں بکھر جائے گا
مسئلہ پھول کا ہے پھول کدھر جائے گا

Wo tu khushboo ha hawaon main bikhar jay ga
Masla phool ka hay phool kidhar jay ga

لڑکیوں کے دکھ عجب ہوتے ہیں سکھ اِس سے عجب
ہنس رہی ہیں اور کاجل بھیگتا ہے ساتھ ساتھ

Larkiyon ke dukh ajab hote hain sukh is se ajab
Hans rahi han aur kajal bheegta ha sath sath

تلاش کر میری کمی کو اپنے دل میں
درد ہو تو سمجھ لینا ، رشتہ اب بھی باقی ہے

Talash kar meri kami ko apnay dil main
Dard ho tu samajh lena rishta ab b baqi hay

Parveen Shakir Poetry About Love

Mein sach kahoon gi magar phir bhi haar jaoon gi
Woh jhoot bolay ga aur laa jawab kar day ga

Kuch to hawa bhi sard thi kuch tha tera khayal bhi
dil ko khushi ke sath sath hota raha malal bhi

میری طلب تھا ایک شخص وہ جو ملا نہیں تو پھر
ہاتھ دعا سے یوں گرا بھول گیا سوال بھی

مر بھی جاؤں تو کہاں لوگ بھلا ہی دیں گے
لفظ میرے مرے ہونے کی گواہی دیں گے

یُوں سرِ عام، کھُلے سر میں کہاں تک بیٹھوں
کِسی جانب سے تو اَب میری ردا آئی ہو

اب کس سے کہیں اور کون سنے جو حال تمہارے بعد ہوا
اس دل کی جھیل سی آنکھوں میں اک خواب بہت برباد ہوا

Ab Kis Se Kaheen Aur Kon Sunay Jo Haal Tumharay Baad Hua
Es Dil Ki Jheel Si Ankhon Mie Aik Khawab Bhot Barbaad Hua

مدتوں بعد اس نے آج مجھ سے کوئی گلہ کیا
منصبِ دلبری پہ کیا مجھ کو بحال کردیا
Muddaton Baad Us Ne Aaj Mujh Se Gila Kia
Mansab e Dilbari Pe Kia Mujh Ko Bahal Kar Dia

Final Words.

In wrapping up Parveen Shakir poetry is like a timeless melody that lingers in the air touching hearts with its blend of elegance and real-life wisdom. Her words are not just ink on paper they’re a journey through love deep thoughts and the quirks of society.

Whether you’re into poetry or not parveen verses have this magic of speaking to your soul. It’s like she cracked the code of combining fancy words with everyday feelings. With collections like “Khushboo” she didn’t just write poetry she crafted an experience.

Parveen Shakir isn’t just a poet she is an emotion we can all vibe with and her legacy is this cool reminder that words, when strung together just right can be a timeless groove.

FaQ.

Q1: Who was Parveen Shakir?

Ans: Parveen Shakir, a famous poet from Pakistan, wrote beautiful and modern Urdu poetry about love and social issues. She also worked as a civil servant and teacher. Sadly, she passed away in a car accident at the age of 42.

Q2: At what age did Parveen Shakir died?

Ans: Parveen Shakir passed away on December 26, 1994, at the age of 42, in a car accident.

Q3: Who wrote the poems with a pen name Shakir?

Ans: Parveen Shakir wrote poems using the pen name “Shakir.”

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *