allama iqbal poetry in urdu

Allama Iqbal Poetry: Best allama iqbal famous poetry in urdu 2 lines for students(علامہ اقبال کی اردو شاعری)

Spread the love

Allama Iqbal Poetry In Urdu,

Allama Iqbal poetry in Urdu, Allama Muhammad Iqbal was born in Sialkot on 9 November 1877. His father name was Sheikh Noor Muhammad. He was a south asian muslim, politcian ,writer and pholispher. Allama Iqbal is the most famous poet of the Urdu and Persian languages, He is also the national poet of Pakistan. Here you can read the best collection of Allama Iqbal poetry in urdu.

Allama Iqbal impactful thoughts significantly contributed to shaping the intellectual groundwork for the establishment of Pakistan in 1947.

He is widely respected as the “Spiritual Father of Pakistan” for his profound influence on the nation’s founding ideals. Allama Iqbal poetry in Pakistan is very famous and undying. Allama Iqbal poetry keep on motivating people, creating a feeling of self-awareness, purpose, and togetherness among those who read them.

Discover the charm of Allama Iqbal Urdu poetry on lines two and four. Allama Muhammad Iqbal famous works, “Bang-e-Dra” and “Zarb-i Kalim,” convey messages of personal empowerment, unity, and the fulfillment of one potential. Allama Iqbal passed away on April 21, 1938.Famous sher of Allama Iqbal “Intoxication affects everyone, . The real pleasure is when the cupbearer holds the goblets.”

Also read the posts.

Best Allama Iqbal poetry in urdu 2 lines Text

Allama Iqbal Poetry In Urdu
Allama Iqbal Poetry In Urdu

کھول آنکھ ، زمیں دیکھ،فلک دیکھ، فِضا دیکھ

مشرق سے نِکلتے ہوئے سورج کو ذرا دیکھ

khol ankh’zameen dakh ‘falak dakh’fiza dakh

mashriq sy nikalty hoyay suraj ko zara dakh

allama iqbal poetry in urdu for students
allama iqbal poetry in urdu for students

پھُول کی پتی سے کٹ سکتا ہے ہیرے کا جِگر

مردِناداں پر کلام نرم و نازک بے اثر

Phool ki pati sy kat sakta ha heeray ka jighar

mard nadhan pr naram-o-nazik by asr

allama iqbal poetry
allama iqbal poetry

نہیں ہے ناامید اقبال اپنی کشتِ ویراں سے

ذرا نم ہو تو یہ مٹی بڑی زرخیز ہے ساقی

Nhi ha na-umeed Iqbal apni kashat-e-warran sy

zara nam ho to ya miti bari zarkhaz ha saqi

Top Famous Allama Iqbal Poetry In urdu

allama iqbal poetry in urdu text
allama iqbal poetry in urdu text

ہو دید کا جو شوق تو آنکھوں کو بند کر

ہے دیکھنا یہی کہ نہ دیکھا کرے کوئی

Ho deed ka jo shok to ankhon ko band kr

ha dakhna yahi ky na dakhay karay kohi

allama iqbal poetry in urdu
allama iqbal poetry in urdu

دِل میں خُدا کا ہونا لازم ہے اقبال

سجدوں میں پڑے رہنے سے جنّت نہیں مِلتی

Dil ma khuda ka hona lazim ha iqbal

shudon ma paray rahnay sy jannat nhi milti

allama iqbal poetry in urdu
allama iqbal poetry in urdu

Best Allama Iqbal Poetry In Urdu Love

اُس قوم کو شمشیر کی حاجت نہی رہتی

ہو جس کے جوانوں کی خودی صورتِ فولاد

Aus kom ko shamsheer ki hajat nahi rehti

ho jis k jawano ki khudi surat e faulaad

بندہ و صاحب و محتاج و غني ایک ہوئے
تیری سرکار میں پہنچے تو سبھی ایک ہوئے

Banda o Sahab O Mohtaj O Ghani Aik Hue Tere
Sarkar Me Pohchen To Sabhi Aik Hue

کوئی قابل ہو تو ہم شان کئی دیتے ہیں
ڈھونڈنے والوں کو دنیا بھی نئی دیتے ہیں

Koi Kabil Ho To Hum Shan Kae Daitay Hay
Dhoonday Walu Ko Duniya B Nae Daitay Hay

کون رکھے گا ہمیں یاد اس دور خود غرضی میں
حالات ایسے ہیں کہ لوگوں کو خدا یاد نہیں

Kon Rakhye Ga Humein Yaad Is Dor-e-Khud Gharzi Mein
Halaat Aisay Hain Keh Logon Ko Khuda Yaad Nahi

میرا طریق امیری نہیں فقیری ہے
خودی نہ یبچ غریبی میں نام پیدا کر

Mera Tareeq Ameeri Nahi Faqeeri Hai
Khudi Na Bech Ghareebi Mein Naam Paida Kar

Allama Iqbal Poetry In Urdu

حقیت خرافات میں کھو گئی
یہ امت روایات میں کھو گئی

Haqeeqat Kharafat Mein Kho Gayi
Yeh Umat Rawayaat Mein Kho Gayi

نہیں تیرا نشیمن قصر سلطانی کے گنبد پر
تو شاہین ہے بسیرا کر پہاڑوں کی چٹانوں پر

Nahi Tera Nasheman Qasar Sultani Ke Gunbad Par
Tu Shaheen Hai Basera Kar Paharon Ki Chatano Par

تو شاہیں ہے پرواز ہے کام تیرا
تیرے سامنے آسماں اور بھی ہے

Tou Shaheen Hai Parwaz Hai Kaam Tera
Tere Samnay Aasman Aur Bhi Hai

نہ ڈھونڈ خدا کو زمین وہ آسمان کی گردش میں
اگر وہ تیرے دل میں نہیں تو پھر تیرے لئے کہیں بھی نہیں

Na Dhoond Khuda Ko Zameen Wa Aasmaan Ki Gardesh
Mein
Agar Woh Tere Dil Mein Nahi To Phir Tere Liye Kahin Bhi Nahi

پرواز ہے دونوں کی اسی ایک فضا میں
کرگس کا جہاں اور ہے شاہیں کا جہاں اور

Allama Iqbal Poetry

Parwaz Hai Donon Ki Asi Ek Fiza Mein
Kargis Ka Jahan Aur Hai Shaheen Ka Jahan Aur

غریب و سادہ و رنگین ہے داستان حرم
نہایت اس کی حسین ابتدا ہے اسماعیل

Ghareeb Wa Sada Wa Rangeen Hai Dastan Harm
Nihayat Is Ki Haseen Ibteda Hai Ismail

بات سجدوں کی نہیں خلوص نیت کی ہوتی ہے اقبال
اکثر لوگ خالی ہاتھ لوٹ آتے ہیں ہر نماز کے بعد

Baat Sajdon Ki Nahi Khuloos Niyat Ki Hoti Hai Iqbal
Aksar Log Khali Hath Lot Aate Hain Har Namaz Ke Baad

تیری رحمتوں پہ ہے مخصر میرے ہر عمل کی قبولیت
نہ مجھے سلیقہ التجا نہ مجھے شعور نماز ہے

Teri Rehmaton Pah Hai Mukhsar Mere Har Amal Ki Qaboliyat
Na Mujhay Saleeqa Iltija Na Mujhay Shaoor-e-Namaz Hai

یہ کفن یہ قبر یہ جنازے رسم شریعت ہے اقبال
مر تو انسان تب ہی جاتا ہے جب یاد کرنے والا کوئی نہ ہو

Yeh Kafan Yeh Qabar Yeh Janazay Rasam-e-Shariat Hai Iqbal
Mar Toh Insaan Tab Hi Jata Hai Jab Yaad Karne Wala Koi Na Ho

Allama Iqbal Poetry In Urdu

نشہ پلا کے گرانا تو سب کو آتا ہے
مزا تو تب ہے کہ گرتوں کو تھام لے ساقی

کام مجھ کو دیدہَ حکمت کے الجھیڑوں سے کیا
دیدہَ بلبل سے میں کرتا ہوں نظارہ ترا

ترے عشق کی انتہا چاہتا ہوں
مری سادگی دیکھ کیا چاہتا ہوں

مانا کہ تیری دید کے قابل نہیں ہوں میں
تو میرا شوق دیکھ مرا انتظار دیکھ

تو شاہیں ہے پرواز ہے کام تیرا
ترے سامنے آسماں اور بھی ہیں

تو شناسائے خراشِ عقدہَ مشکل نہیں
اے گلِ رنگیں ترے پہلو میں شاید دل نہیں

اس چمن میں میں سراپا سوز و سازِ آرزو
اور تیری زندگانی بے گدازِ آرزو

میری صورت تو بھی اک برگِ ریاضِ طور ہے
میں چمن سے دور ہوں ، تو بھی چمن سے دور ہے

ہزاروں سال نرگس اپنی بے نوری پہ روتی ہے
بڑی مشکل سے ہوتا ہے چمن میں دیدہ ور پیدا

سو زبانوں پر بھی خاموشی تجھے منظور ہے
راز وہ کیا ہے ترے سینے میں جو مستور ہے

آہ یہ دستِ جفا جو اے گلِ رنگیں نہیں
کس طرح تجھ کو یہ سمجھاؤں کہ میں گل چیں نہیں

مطمئن ہے تو، پریشاں مثلِ بو رہتا ہوں میں
زخمیِ شمشیرِ ذوقِ جستجو رہتا ہوں میں

سو زبانوں پر بھی خاموشی تجھے منظور ہے
راز وہ کیا ہے ترے سینے میں جو مستور ہے

توڑ لینا شاخ سے تجھ کو مرا آئیں نہیں
یہ نظر غیر از نگاہِ چشمِ صورت بیں نہیں

Allama Iqbal Poetry In Urdu Text

یہ پریشانی مری سامانِ جمیعت نہ ہو
یہ جگر سوزی چراغِ خانہَ حکمت نہ ہو

اپنے من میں ڈوب کر پا جا سراغ زندگی
تو اگر میرا نہیں بنتا نہ بن اپنا تو بن

میری نوائے شوق سے شور حریمِ ذات میں
غلغلہ ہائے الاماں بت کدہَ صفات میں

گاہ مری نگاہِ تیز چیر گئی دلِ وجود
گاہ اُلجھ کے رہ گئی میرے توہمات میں

تو نے یہ کیا غضب کیا ! مجھ کو بھی فاش کر دیا
میں ہی تو ایک راز تھا سینہَ کائنات میں

خودی کو کر بلند اتنا کہ ہر تقدیر سے پہلے
خدا بندے سے خود پوچھے، بتا، تیری رضا کیا ہے

خدا کی رحمت سے کبھی نا امید نہ ہوں
جو شکوہ کرے وہ محبت ہونا چاہئے

خدا کی رحمت سے کبھی نا امید نہ ہوں
جو شکوہ کرے وہ محبت ہونا چاہئے

خدا کی رحمت سے کبھی نا امید نہ ہوں
جو شکوہ کرے وہ محبت ہونا چاہئے

Final words.

In the end, Allama Iqbal poetry, especially in Urdu, takes us on a journey of self-discovery and deep thinking. His words inspire us and help us understand the life better. Muhammad Iqbal poetry is like a guide, encouraging us to reflect, grow, and appreciate our shared humanity. His poetry, rich in the beauty of Urdu, remind us of important truths and envision a world where everyone can reach their full potential. Let’s cheer Allama Iqbal poetry, particularly his contributions in Urdu, and let its simple yet powerful messages continue to inspire and unite us.

2 Comments

  1. Hi my friend! I wish to say that this post is awesome, great written and include approximately all significant
    infos. I’d like to peer extra posts like this .

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *